Like Us

There was an error in this gadget

Friday, November 14, 2014

اشخاص میری نظر میں

شاید انکا دل انکے بالوں کی طرح سفید نہ ہو مگر انگریزی سوٹ اس بات کی گواہی دے رہا تھا اور جوعام طور پر ہم فرض بھی کرلیتے ہیں کہ یہ تو کوئی بڑی ہستی ہے۔ شاید یہ ہر بڑی ہستی کی کوشش ہوتی ہے کہ وہ اپنی پہلی انٹری کو منفرد بنانے کیلئے طرح طرح کے طرزبیان اپناتے ہیں۔ کچھ تو اپنے طرزکلام کو فصاحت اور بلاغت کی ممکنہ حدود تک لے جاتے ہیں او ساتھ ہی ساتھ میں اپنے سامعین کو غیر تکلفانہ انداز مین مخاطب کرکے انہیں متاثر کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ اسی منفرد انداز کی تلاش میں کوئی سادہ سادہ مثال سے شروع کرکے منطقی دلائل کے ساتھ بحث کو آگے بڑھاتے ہیں جبکہ کچھ ہوائی باتوں اور فکری داو پیچ سے شروع کرکے آسان در آسان موضوع کی طرف بڑھنے لگتے ہیں۔ شخصیت کو منفرد بنانے کے اس مارکیٹ میں کئی چیزیں ایسی ہیں جو آجکل دھڑادھڑ بکتی ہیں۔ جسمیں پہلی چیز نظریہ پاکستان، قائد اعظم، او تحریک پاکستان کے سرکردہ رہنماؤں کی مخالفت اور نصاب میں پڑھایی جانے والی معاشرتی علوم کے منافی نظریہ قایم کرنا ہے اسکے ساتھ ساتھ وہ سامعین کو اک دم اپنے قریب ایسے لاتے ہی
ں کہ الفاظ کے بہتر اور بجا چناؤ کی وجہ سے سامعیں بھی اسی کی طرف مدعو ہوتے ہیں۔
پچھلے دنوں ایک امریکی ویب سائٹ نے دنیا کے طاقتور ترین اشخاص کی فہرست جاری کی تھی۔ جس کے مطابق دنیا کا ایک نمبر مداری ولادی میر پوٹن جو کہ روس کے صدر ہے، ٹہرایا گیا ہے اور اسی طرح امریکی صدر ابامہ اور باقی سب دوسرے تیسرے نمبر کے مداری گردانے گئے ہیں۔ لیکن ان سب کا نام تو دنیا کی سطح پر ہے اور یہ مداریوں کی لسٹ جب پاکستان اور پھر اسکے بعد ہمارے خیبر پختونخوا پہنچتی ہے تو یہاں پر بھی بڑے بڑے نام آتے ہیں۔ میں مداری اس لئے ان کو کہ رہا ہوں کہ لوگ بڑے انہماک سے انکی باتیں سنتے ہیں اور اس پر عمل بھی کرتے ہیں اور یہ لوگ بھی یہ توجہ حاصل کرنے میں عمومن کامیاب ہی رہتے ہیں۔
ان ہی ناموں میں ایک نامور نام ڈاکٹر ناصر جمال صاحب کا بھی ہے جنہوں نے پچھلے ہفتے پشاور یونیورسٹی کے جرنلزم ڈیپارٹمنٹ میں
 آزاد پروجیکٹ روپورٹنگ کے سلسلے میں اپنے مداح کو لداخ انداز سے محضوض کیا۔ تمام تر شائقین اور مداح کی شائد میری طرح کی سوچ ہوتی ہوگی کہ یہ ہستی کہاں سے شروع ہوگی اور کہاں پر ختم ہوگی۔ ہر شخصیت کی اپنی ایک سپیشلٹی ہوتی ہے چونکہ ان صاحب کو آسان گفگتگو کے ہنر پر دست دراز حاصل ہے تو انکے ابتدائیہ کے لیے ہماری تشنگی میں مزید اضافہ ہوا اور جوں ہی مداری صاحب کلاس میں داخل ہوتے ہیں اور طرح طرح کے پروموشنل جملو سے ان کا پرتپاک اسقبال کیا گیا۔
صاحب کو جب کلاس کو مخاطب کرنے کا اختیار ملا تو جناب نے کلاس میں بیٹھے تمام خواتین(بشمول لڑکیاں) اور حضرات کو مخاطب کرکے کہا کہ کیا آپ کو پروجیکٹر پر ڈسپلے اس لکھائی میں اور بورڈ کی پیشانی کو چومتی ہوئی اس بینر کے لکھائی میں کوئی تفاوت نظر آتی ہیں۔ اور یوں مداری نے اپنا پہلا پتہ چال کردیا۔۔۔۔ سب سوچنے لگے لیکن ہمارے ہاں تو اشخاص کی عزت اس حد تک کی جاتی ہے کہ ان کے سوال کا جواب دینا بھی انکی حتک عزت کا زینہ سمجھتے ہیں۔

جناب نے تو اس پہلے سوال ہی میں فری ہونے کی کوشش کی لیکن ہماری کیا مجال جو جناب کے ساتھ باندھے اس عزت مابی کو توڑے۔ چنانچہ انہوں نے سوال دوبارہ دہرایا لیکن پھر بھی کسی کو جرات نہ ہوسکی تو مداری صاحب بقلم خود گویا ہوئے کہ کہاں پر آپ نے امریکن انگلش لکھی ہے تو کہاں پر آپ برٹش انگلش کے پجھاری ہیں، آپ لوگ تو کنفیوز نظر ارہے ہو یا بالفاظ دیگر زہنی تشنج کا شکار ہو۔ اتنی کنفیوژن کیوں آپ ایک کو فالو کرو دوسرے کو چھوڑ دو۔ اور یہ بات کلاس میں جرنلزم کے اساتذہ کرام بھی سن رہے تھے اور میرے بھی ڈائریکٹ دل پہ لگی کہ چلو بے راہ کو کسی نے راہ تو دکھائی۔ اور اسکے بعد ڈسٹر سے شروع ہوتے ہیں او سامعین کو یکے بعد دیگرے بری صحافت کے نمونے پیش کرتے رہے۔ ہم بھی انکے الفاظ کے نفاست کے گرداب میں آکر کئی صحافتی الفاظ کی شدید مزمت کردیتے۔ لیکن میں تو اس سوچ میں تھا کہ اخر میں یہ ہمیں نتیجتن کچھ مواد پڑھنے کو دینگے یا تجویز کرینگے کہ یہ سب تو غلط ہیں اور ہم بھی مانتے ہیں کہ غلط لیکن یہ کچھ اصلاحات ہیں یا لکھائی ہے یا چلو اقتباسات ہیں جو کہ  میرے مطابق پڑھنے لائق ہیں ۔ لیکن صحیح کیا ہے صحیح خبر کیسے لکھتے ہیں صحیح رپورٹ کیسے بنائی جاتی ہے آج تک کسی نے نہیں سکھایا نہ ہی پرھایا تنقید سیکھی اور ساری عمر کرونگا انشااللہ  لیکن ٹھیک کیا ہے یہ تو بتاتے جاؤ ۔۔۔۔۔ نہیں جی ہمارے ہاں تو ایک یہی سانپ ہے یہ بھی پٹھاری سے باہر آجائے تو پھر تو تماشہ (کھیل) ہی ختم۔

 

Tuesday, August 12, 2014

Awareness Seminar on Khyber Pakhtunkhwa Right to Information Act 2013 Held


Peshawar: Aug 13, 2014: Prof Kaleem Ullah, Commissioner Khyber Pakhtunkhwa Right to Information Commission said that RTI is to strengthen the citizens and citizens should own it. He was speaking in a seminar organized by Centre for Governance and Public Accountability (CGPA) in District Press Club in Kohat on Wednesday. 
Mr. Zai Ullah Bangash, Member of Provincial Assembly stated that the law makes the elected representatives and public bodies accountable to the citizens, therefore its importance for democracy can’t be overlooked. He stressed that citizens should actively practice their Right to Information by information requests to public bodies.
Members of civil society organizations, Journalists, Lawyers & public officials attended the seminar. Muhammad Anwar, Executive Director CGPA shared salient features of the law and explained how affective the use of RTI Act is for the accountability of the government employees. He shared the process of filing information request to the public body. He stated that there is no need to submit fee or show reason for filing of information request. 

Prof Kaleem Ullah, the chief guest of the seminar, explained about the structure of the commission as well as the process of filing complaints and the role and responsibilities of the commission. Prof Kaleem Ullah stated that all provincial public bodies or those institutions performing public functions can be accessed for the right to information under the law. He stated that the information commission is fully prepared to ensure citizens constitution rights as determined by the law. The use of RTI Act will make us honorable as well as respectable citizens and this Act should be used by every citizen, Prof Kaleem Ullah concluded.  

Sunday, April 27, 2014

نيمګړے ژوند

لا يے د سپين مخ خالونه شمارم
چي يے اوکتل راپورته زره مے لاړو هوا ګير شو
نه مے ليدلے وو د سپين مخ ديدن په داسے حال کښے ۔۔۔ نه مے کتلے وو نيازبين جانان په داسے حال کښے
زه د سپين مړوند د خوبونه اموخته خو نه وومه او نه مے د مستئ نه ډکه ليلا په خپل غيږ کښے نه وه ځايے کړۓ۔۔۔ نه مے د چا په ليمو کښے د مينے ډکه خندا ليدلے وه۔ هسے مے د ژوند خواږه په خوبونو کښۓ ځايے کړې وو خو په حقيقت کښۓ مے د وجد ډکه ځواني نه وه ليدلے۔ دا يو خوب وو که حقيقت چي تر اوسه پکښے زنګيګم نه پرے مړيګم او نه مے زړۀ ته ددے پريخودل قبول دي۔ دا ژوند به دومره هم چرته شيرين وي پر دے هډو فکر نه وو کړۓ۔ اوس خو مے د زړه دروازے هم دغه مينه پسے کګے دي۔ ما خو په غيږه کښے د مور وے لوبے کړۓ خو چي د نيازبين جانان په څنګ کښے کښيناستم نو د ژوند يو نوے  نه ختميدونکے باب چي لکه شروع شي۔ چي رانه دوانړۀ لاس به يے چاپيره کړل واړۀ غمونه به په شا شول بس صرف يو د جانان مينه به وه۔ د ګهړئ ساعتونو به داسے منډے وهلے چي هډو ملګرتيا به يے نه کوله۔ ويئل به يے راته په غوږ کښے خان مے يے جانان مے يے د خوبونو شهزاده مے يے خپلوم به دے سر مے درنه جار شه۔ نه مال پکار دے نه جايئداد بس په دنيا باندے ستا د ژوند ملګرتيا غواړمه۔ ځما هم د مينے دغه انداز څه دا رنګ زړه ته پريوتو چي په بيئليدو کله بيئليږم۔ د ژوند ښه ساعتونه مے د هغه د څۀ په څنګ کښے څه داسے تير کړل چي د فکري او تخيلاتي ژوند نغمے مے په رنړا ورځ د خپل ژوند په مازيګرے کښے اوليدے۔ او دا له بس نه وو چي جانان مے پرله پسے دومره مينه راکړۀ چي به نه وو او يا به خفه وو نو د زړه درګاه به مے ورانه ويجاړه وه ۔ بس هر وخت به مے په زړه کښے هم ټپه غږيدله
نه فکر د حرم وے او نه خيال د بت خانے
بس ژوند وے او جانان۔ بس ژوند وے او جانان
که به خفه وومه نو خفګان به يے رانه دومره لرے بوتلو چي د خفګان سيورے به هم ماته نزدے نه راتلو۔ جانان مے داسے جانان دے چي ځما د زړه خبره د هغه په خوله او د هغه د زړۀ خبره ځما په خوله وي۔ کوم څه چي به مو فلمونو کښۓ ليدل او خپل د خيالونو تنده به مو پرے ماتوله هغه يے راته په حقيقي ژوند کښے داسے راوخودل چي زړه به مے باغ باغ شو۔ او تابعدار به مے داسے وو جانان چي چرته تګ راتګ به وو نو ځما بغير به نه وو او ځما اجازت نه بغير خو به خپل کورته هم تګ کول يے مناسب نه ګڼل ۔ که د جانان جوړولو هغه قيصه يے درته تيره کړمه نو دا عين ممکنه چي راپورے ملنډے به اوکړئ۔ خو تيروومه يے خامخا۔ چي په لومړي نظر کښے مو يو بل اوليدو نو خه د يو بل پخه اوسځيدو۔ خو ولے ورو ورو مے د جانان په لور نظر خوږيدل شروع شو او بيا دا چي يو ورځ مے ورته د زړه حال هم اوئيل ۔۔ نازکه وايئ چي لاليئه دا ته اولنے نه يے چي به د زړه حالونه وايے ماته پخوا ډيرو دا لاپے ويشتلے دي۔ ورته ګويا شومه چي جانان نه لاپے اولم او نه اوچتے دعوے کومه خو بس د نظره مے خه راغلے يے او په زړه پورے مے يے که ته منے او که نه ۔ او هم دا خبرے ورو ورو ځما او د هغے د مينے وړانديز اوګرځيدو۔ هغے په ما کښے خپلوالے ليدو او ماته به هم د هغے په چرته تګ راتګ غصۀ راتلله ۔ د بهر دنيا په ښه بد به مے پوهوله۔ خو افسوس او بدقسمتي ځما دا وه چي هغه ځما وه خو زه د هغے نه وومه۔ ځما جانان د ژوند داسے ډګر نه وو پريخے چي ماله يے پرے خپل عادت نه وو راکړۓ۔ کله کله فکرمند يم چي بے له جانانه به د ژوند شپے څنګه سبا کومه۔  خو خير جانان مے داسے جانان دے چي ورته به دا هم پته وه چي د مينے مزے مے لنډ دے او نن دے که صبا دے خو جانان مے د بل چا دے ولے بيا هم په مينه کښۓ مے ورله نه چرته کمے ليدلے او نه په تندي کوتونه۔ او څنګه به يے داسے د زړۀ خو شيدا وه کنه په خپل جانان۔۔۔ په ژوند او مينه کښۓ داسے غم نه وو چي ما دے جانان ته ورکړے نه وو،،،،، جدائي ، بے وفائي، بے ننګي، خپل مطلبي ،،،او داسے نورے ډيرے خبرے مے د جانان په قسمت پسے تړلے وے۔ ولے په بدل کښۓ يے هميش ماله مينه راکړۓ ده ځما خيال يے ساتلے دے او په ما يے ننګ کړے دے۔ زه به دغه جانان څنګه دے دنيا ته يواځے پريږدم ځه به خپل جانان څنګه د هغه خلقو ترمينځه ټيټ سترګے کومه د چا ترمينځه چي هغه په ما ننګ کړے دے۔ زه به خپل جانان څنګه د بل غيږے ته پريږدم۔ خودغرضي مے دا ده چي د جانان بايئلولو وروستو مے هم بے له دغه جانان ګزاره نيشته۔ د ژوند يو داسے موړ چي پرے څه غواړم هغه کولے نشم او چي په غواړم هغه پخپله کيږي راسره ۔۔۔۔ که دا دا ژوند امتحان وي نو ځه پکښے فيل صحيح خو ولے دا داسے امتحانونه دي پکښۓ د فيل کيدو هغه جز هم نيشته دے۔
زه خو په داسے صورتحال کښے يم چي د جانان په سترګو کښۓ خپل مطلبے بے وفا او بے ننګه اشنا يم د دنيا په سترګو کښے يو غلط او بد چلنه د ملګرو ترمينځه ډير مينه ناک خو ناجاړۀ او د مور پلار ترمينځه يو داسے ځوئے يم چي هغوي څه خوبيانے غواړي هغه ټولے هم ځما په زات کښۓ يو ځايے شوي دي۔ که جانان مے ګټمه نو مور پلار مے رانه ځي او که مور پلار خوشحالومه نو جانان مے رانه ځي۔ يو خو ډانګ دے او بل خو پړانګ۔۔
تر اوسه به مے په ښکلا باندے يقين درلودلو او په سپين مخ به مے د ښکلي جانان قوي ګمان وو خو چي د غنم جانان ترڅنګ شومه نو اندازه راته اوشوه چي جانان خو په اصل کښے هغه فکري يو والے دے چي له مخه يے د يو بل په فکرونو کښۓ والے وي او دوه جسمونه په يو روح ژوندي وي۔ مينه ټوله قرباني وي او بيا داسے جانان چي په مينه کښے د شريکے او په قربانئ او غم کښے د خود غرضئ قائيله وي په لټولو هم نه ترلاسه کيږې۔ په دنيا کښے څه داسے کارونه هم کيږي چي ډير ټيک او جائز وي خو ولے چي په وخت اونه شي او يا بيا د چاپير چل د رسمونو رواجونو سره سمون اونه خوري نو دغه کار د دنيا په نظر کښے يو ناسور بلل کيږې۔
کله کله د ژوند يو داسے ډګر هم راځي چي انسان خپل فکري جسم په حقيقت کښے بيا مومي خو د دے خوشحالئ نه هغه کسان خبر وي څوک چي ددے کيفيت نه تير شوي وي۔ بس چي مے نظر وي په جانان نو د خولے مے څۀ داسے الفاظ اوځي۔۔۔۔
بے لتانه  ځما ګزاره ګرانه ده ۔۔۔ مينه د زړۀ کله اسانه ده۔۔۔۔
خو چي د جانان سترګے مے وينم نو په جواب کښۓ راته وايئ
اے ځما ياره زړګيه۔۔۔ غم مه کړۀ ليونيه۔۔۔ د ليلا د زړۀ دنيا دے هم په تا باندے ودانه ده۔۔۔
مينه د زړۀ کله آسانه ده۔۔۔۔
کله کله خو وايم چي د دنيا ددے سمسور رواجونو دا زنځيرونه د خپلو خپو غوس کړم او چرته لرے د فطرت په غيږ د مينے او خکلا يوه جونګړه د جانان ترڅنګ آباده کړمه۔۔۔ خو ولے حقيقت دا دے چي بے له زمانے نه ژوند نه کيږې او بيا په داسے معاشره کښے رسمونه رواجونه په مذهب باندے هم حاوي وي نو بيا خو داسے سوچ درلودل هډو له فضول دي۔ ډيرے خبرے د انسان په وس کښۓ نه وي او چي کله انسان بے وسه شي نو خپله بے وسي د قسمت په چابړي کښے واچوي او بيا د خپل ځان په ځايے خپل قسمت ګرموي۔
دا څه داسے مينه نه ده چي ځما مينه ډيره ده او د جانان مے نيشته يا بيا زه د خپلے مينے اظهار کومه او جانان مے چپ پاتے کيږې،،، ا افسوس خبره خو داده چي جانان مے يو په دوه مينه راکوي او بل خوا د اظهار يوه طريقه يے پريخے نه ده نو بيا ولے مے د جانان په شان کښۓ اونه ليکمه۔۔۔
يو د سپرلي مسته هوا په جوبن کښے وي او بل خوا دوه ځوانئ د يو بل غيږه کښے وي نو دغه وخت به صبر پيمانے په جو جو نه اوړي۔۔؟ آيا دغه وخت به هم د دوانړو ترمينځه داسے څه وي چي د لفظونو مرستے ته به اړتيا لري۔۔؟  د جانان دا يو تصوير مے ډير کم ليدلے دے چي د زمانے او چاپير چل د رواجونو د بيړو سربيره د خپل جانان هر ارمان ترسره کوي۔
کله کله فکر کومه چي د جانان ددے مينے په جواب کښۓ به څه ورکومه او ترکومے به د مينے په دے ټال جوټے خورمه ۔۔۔۔ قسمت خو له ازله ځه د جانان نه په بيل ژوند اړولے يم ۔۔۔  په راروان وخت مے سوچ دومره قوي شوے چي د جانان په څنګ کښے ناست يم او فکرونه د بيليدو وي راسره چي څنګه به د فراق په سرو لمبو کښے سوځم ،،،څنګه پيکه به وي هغه ژوند چي د جانان خواږه پکښۓ نه وي۔۔۔ شائد بے له جانانه هډو له ژوند وي نه خو يو وجود وي چي ساه اخلي او د خپل مرګ په انتظار کښے ورځے شپے صبا کوي۔۔۔
يا خو به ځما سره داسے کيږې چي ليکلو ته کينم نو د جانان عکس نيول نه راکوي او چي په سوچ يے ډوب شمه نو شپے صبا شي خو د جانان خائست نه ختميږې۔۔۔ خو شائد د جانان د ژوند هر اړخ او هر صفت د کاغذ ترڅنګ کول ممکن نه دي ولے چي په څو مياشتو کښۓ مے قدرے دغه يو څؤ صفحے اوليکلي۔۔۔۔
اے ځما جانانه که تا ځما د ژوند دا نيمګړے باب لولے نو چرے هم دا اونه ګنړۓ چي دے کښے څه کمے دے ولے چي ډېرے داسے خبرے دي چي ليکلے نشمه او ډيرے داسے خبري دي چي ليکل يے غواړمه خو نيول نه راکوي ۔۔۔ بس دا يو خواست مے دے چي ځما يے او ځما اوسه ځکه چي بے لتا نيمګړے يم جانانه۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Wednesday, April 23, 2014

حد درجے کی سادہ لوحی


ایک ایسے دور میں کہ دنیا کے انسان خلا میں جاپہنچے ہیں اور وہاں پر باقاعدہ بحریہ ٹاون جیسے منصوبے کا آغاز کرنے کو ہیں ایسے میں ہایئر ایجوکیشن کمیشن کی طرف سے ٹاپ رینکینگ یونیورسٹی با الفاظ دیگر قائد اعظم یونیورسٹی کے طلبا کی سادہ لوحی ،مطالعاتی متانت اور ایک دوسرے کے ساتھ منسلک کئے گئے جزباتی تعلقات اس صدی کی انسانی عقل شائد ہی اسکا احاطہ کرپایے۔اور کر بھی کیسے پائیگی ایک طرف لیٹیسٹ انڈرائڈ جیلی بین کڑیاں جو کہ روزانہ کئی فرینڈز نئے نئے ورژنز میں ڈاونلونڈ کرتی ہے اور دوسری طرف تو یہ حال ہے کہ ایک ہی ہاسٹل کے تین کمروں کے پانچ روم میٹس کے لئے ایک بارہ اسی موبائیل ہی انکی جملہ ضروریات پورا کرتی ہے ۔ عقل دنگ رہ جاتی ہے باچیں کھلی کی کھلی رہ جاتی ہے اور بنی نوع انسان ششدر ہو نے کے علاوہ دوسر�آپشن ہی شو نہیں کرتا۔ اور شو کیسے کرے بھائی وہاں تو ایک ہی موبائیل پر چار مختلف النوع حسین و جمیل دل فروشوں سے ایسے بات چیت ہورہی جیسے ایک ہی دوشیزہ تمام سے مخاطب ہو لیکن پوچھنے پر نام الگ الگ بتاتی ہے۔ ایک ایسی شام جس میں بن بلایے مہمان تو کئی تھے لیکن جو بلایے گئے تھے انکی خستہ حالی بھی دیکھنے لائق تھی۔ کراچی ہٹس میں پانچ دو شیزاوں کے سامنے چار خوب رو نوجوان ایسے بیٹھے تھے کہ ہر کوئی شائد یہی سوچ رہا تھا کہ اگر سلیکشن میچنگ کالم کے زریعے بھی ہوگا تو تب بھی ایک حسینہ طاق اعداد کے زمرے میں آتی ہے جسکا کوئی جوڑا شائد بن نہ پایے یا شائد یہ ایسا ہی کوئی ماحول تھا جیسے پیپر میں پانچ میں سے چار سوال حل کرنے ہو اور ان میں بھی پہلا اور دوسرا لازمی ہو جو کہ ایک چشمہ پہنے صاحب بہادر جیسی شخصیت کے متعلق ہو اور دوسرا ایک ایسے میچور عاشق کی سوانح حیات ہو جس نے کئی کو اب تک پھنسایا ہوگا شائد لیکن خود ایک نومولود محبت کے کارن دارالخلافہ میں شام منانے نکلے ہو۔ باقی تین سوالات میں سے ایک امیبا کی ساخت بیان کرنی ہو اور اگر ممکن ہو تو موبائیل ٹارچ سے اسکے شناخت او ر ساخت پر روشنی ڈالئے جو کہ بعد میں شائد برا بھی منایا جایے۔ دو سوالات میں ایک تو ٹیکسلا کی حدود اربعہ بیان کرنا ہو نیز پاک آرمی کے چاق و چوبند دستوں کے شانہ بشانہ کام کرنی والی آرمی ایجوکیشن کورپ کے خدوخال بھی لکھنے ہو۔ آخری سوال میں کچھ آسانی بھی ہو لیکن اسے حل کرنے کا ویسے ہی دل نہ کرے وہ لشکے لشکے ایزی بھی ہو شائد اور ڈی آی خان کا تو ویسے بھی حلوہ مشہور ہے لیکن اس سوال میں نیگیٹیو مارکنگ کا آپشن پوشیدہ تھا جو کہ طالب علم جان چکے تھے۔ دوسری طرف محفل میں بیٹھے دو بندے ایسے بھی تھے جو دل ہی دل میں اپنے آپ کو برا بھلا کہہ رہے تھے کہ ہم کیوں یہاں ہیں۔ لیکن بادل ناخواستہ ان حضرات نے یہ غنیمت جانی کہ آخر میں کچھ نہ ہوا تو کارڈز تو ایکسچینج کر ہی لینگے اور ہوا بھی ایسا ہی لیکن کارڈ ایکسچینج نہ ہوا صرف لیا گیا۔ بات کہاں سے نکلی اور کہاں تک پہنچی موضوع تو ہمارا ان طلبا کا سادہ پن ہے جو پانچ دوشیزائیں ایک ہی موبائیل پر اکتفا کرتی ہے اور ایکدوسرے کے لئے جزبات ایسے ہیں کہ کلاس تو کلاس فون پر بھی ایکدوسرے کے لئے پروکسی لگاتی ہیں مطلب اگر ایک کہیں باہر گئی ہے تو دوسری وہ بن کے اسکے طالب عشق سے اسی انداز میں یوں مخاطب ہوتی ہے کہ اسے زرا برابر شک بھی نہیں ہوتا۔ لیکن کبھی کبھی اس بے لوث دوستی میں دراڑ بھی آسکتی ہے اور کئی باتیں چھپائی بھی جاسکتی ہیں۔ مجھے حیرت ان دوشیزاوں پہ نہیں جو ایک ہی موبائیل سے سب کو مخاطب ہوتی ہیں لیکن ان خوب رو مڈ کیریئر جوانوں پہ ضرور ہے جو کہ شائد اپنے پچھتاوے کے لیے کوئی نہ کوئی جواز تو ڈھونڈ ہی چکے ہونگے کہ کیونکر وہ وہاں چند ایسے نومولود حضرات کے بیچ جا بیٹھے جن کے زہن میں محب وطن ترانے، عزیز بھٹی ہیرو اور اے فار ایپل ابھی بھی تھا۔ شائد وہ حضرات اپنے کیلیبر سے یہ جاننے کے بعد کہ ان کو تو آسان بھاشا ہی سمجھ آتی ، تھوڑے برفانی تودے کی فورن سرک بھی گئے لیکن ان جیو کارٹونز کو یہ تک نہ سوجھی کہ زرا ہم بھی ان سے تخیلاتی ملاپ کی خاطر ذرا آگے بڑھ ہی لیں۔ محفل میں بیٹھی ایک سونیٹ چاکلیٹ کلر کی خاتون نے کئی کوششیں کیں کہ دونو وفود کے بیچ کچھ نہ کچھ نگانگت پیدا کرہی لیں لیکن شائد وہ پرائیویٹ سکول میں پڑھی لکھی تھی جہاں تیمور اور چیونٹی والا سبق سرے سے ہوتا ہی نہیں۔ میری لکھی باتیں شائد چند دوستوں کے علاوہ کسی کے سمجھ میں نہ آئے جو کہ موقع محل پہ موجود تھے اور اگر انکو سمجھ آجائے تو یہ بھی بڑی بات ہے۔ شائد پھر وہ دوستوں کے بغیر کبھی دارالخلافے کا رخ نہ کریں اور کرینگے تو شائد وہی حال ہو جو پرسو ہوا تھا۔۔۔۔۔

Thursday, April 10, 2014

Malala as an Economic Asset to Pakistan

Image

Islamabad, Dec, 10, 2012: So called terrorism effectee of Swat valley on account of her voice for female education Malala Yousafzai, has gained much more attention on the global media and as lowering down the news content about her, The UNESCO has decided to raise a Fund in the name of braved Malala. The motive was initiated on the world human rights day in the Paris by President Asif Ali Zardari, after visiting Malala discovering her health.
 The announcement comes in the scenario when the Amnesty International has declared Pakistan the 33rd most corrupt country in its annual report. Last year Pakistan was enjoying 42 number in the aforementioned report while this year Pakistan made a great progress in the corruption skipping the 9 numbers in descending order. So in the country like Pakistan having such rapid progress in corruption, Malala Fund or Non Government Organizations working on Malala motives is nothing more than ghost funds and progress.  After having a enraged criticism on distinctive behavior between Malala and her other class mates who were also sustained injuries, the government only allow their treatment free but avoided the same reward like Malala. The fact is that what a noble deed Malala has done upon which the world is paying her tribute and is portraying her as a National Heroic character.The question also does arise that the Swat valley was completely censored in the news matters during swat operation then how could be an underage girl dare to leak the routine of swat without the permission of Inter Services Public Relations. If she did so without taking an ISPR version then she is guilty of a crime and she committed an anti state crime. I really shocked when I heard her as she quoted in http://www.nytimes.com/video/2012/10/09/world/asia/100000001835296/class-dismissed.html this video. The video is being released some way back in 2009 on the world’s leading news Paper website The New York Times. The Malala expressed in the video that she feels shame of her Pakistani Army which is said to be one of the world’s best forces. And I think this all happened to Malala is the reward of these words and that blog, she was writing for British Broadcasting Corporation. So if the rebellion Malala can get such an honor then how can we termed Taliban as Terrorists.I will request to my Under graduated Politicians and to the Vital force of Pakistan please not to do media business on such issue and also please first check what have been dictated to you, if it is in your country favor Do follow it but if reflects your country negative then must avoid it.   Never ever prefer for your personal interest. Think for the nation and be competent to put forward our country on the progress track.

فیرنی نما زرد خاتون، ایک انار سو بیمار

َ’وہ اپنے نزاکت کے نخرے اور لطافت کے کرشمے بکھیرتے ھویے نیم کنوارے انجمن میں یوں مخل ھویئں کہ جیسے دبے پاوں چمن میں بھار آیی ہو، لیکن محفل میں بیٹھے حضرات نے گنوارہ ھی نہ کیا کہ کویی فالصہ جیسا  وجود زن انکی محفل میں شامل ھوگیا ہے او وہ گنوارہ کیسے کرتے محفل میں تشریف رکھے ہویے ایک نیم بزرگ انسان جو اپنے زندگی کے اکثر و بیشتر لمحات رنگ رلیاں مناتے ھویے یادگار بنا چکے تھے  یھاں انتھایی متانت کے ساتھ اپنے تجربے کے ہم عمر نوجوانوں میں انسداد ازدواجیت کی تحریک کو متحرک کرنے کی ترویج میں ایسے مگن ھے کہ کسی کے دخول و خروج کا پتہ ھی نھیں چلتا۔ وہ بزرگ اپنے لاشعور جو کہ میرے اندازے کے مطابق ایک ھزار گیگا بایئٹ کے لگ بگ ھوگا سے موقع محل کے مناسبت سے ایک ایک منفرد واقعہ سناتے اور صحبت میں بیٹھے نوجوانوں کے حوصلے ازدواجیت کے ضد میں اور بھی بلند ھوتے، درحقیقت یہ صاحب بھادر اتنا سنجیدہ مزاق لے بیٹھے تھے کہ ھر نوجوان محفل میں نفسیاتی غیر حاضری کا شکار تھے اور ان کے ھاں میں ھاں ملاتے ھوئے میری طرح یہی سوچتے کہ میں نے تو جنم جنم ساتھ نبھانے کی قسمیں اٹھارکھی ھیں، بھلا میں کیسے اپنے آنے والے  درد سر سے چھٹکارا پاوں گا۔

 کیا یہ زنانہ زات اتنی بری ھے کہ اس کے ساتھ ایسا سلوک روا رکھا جایے۔ اور اگر یسا ہی ہے تو یہ سامنے بیٹھی زرد فیرنی کی طرح لشکارے مارتے ھویی جوانی کیوں اتنا ستاتی ھے۔  کیا یہ انڈے کے زردی کے مماثلت والے لباس میں ملبوس نینوں کو شٹر ڈاون ہڑتال کے دروازوں کی طرح نیچھے کیے ھویے مستی میں سست روی کے قایئل دوشیزہ بھی اسی گروہ کا حصہ ھے جسکے برخلاف ھم سب زبانی اور فکری طور پر برسر پیکار ہیں۔
کافی گفت و شنید کے بعد وہ کوہ کاف کی پری جیسی نازک خاتون نما دوشیزہ بھی سمجھ گئیں کہ اسکے آجو باجو انھی کے زات برخلاف باتیں اور آنے والے وقت کی منصوبہ بندی ہورھی ھے۔ تاہم موصوفہ کے  سید قایم علی شاہ کے سر جیسے صاف وشفاف ایڑھی کے درد نے حاضرین محفل کی توجہ ایسی بٹوری جیسے کویی ناچاہتے ہویے بھی ڈیپارٹمنٹ میں نو وارد ہونی والی خاتون کی رہنمایی کے لیے لپکتے ہیں‘
یہ کسی سنیمایی سین کی منظر کشی نہی اور نہ ہی کسی سجی محفل کی روداد ھے، اگر ھے تو فقط ایک حادثاتی ملاقات کے چند ناگزیر لمحات ہے جس نے بے چینی اور عدم اطمینان کی ابر آلود فضا کو میرے خیالات کے تھانے میں سفارشات کے فون کر کر کے مجھے وقایع نگاری پر مجبور کیا۔ بریالی صمدی کے ویسٹ کوٹ کے بٹن جیسے بڑی بڑی گول انکھیں جو کہ ایک ھی محفل میں کیی محازوں سے نبردآزما تھیں، کبھی جھکتی تو کبھی سرویلنس کیمرے کی طرح محفل میں پایے جانیوالے اشرف المخلوقات کے بہکتے ہویے چھرے پر لمحہ بھر کے لیے رکتی اور اپنی خارجہ پالیسی کا تعین کرنے بعد دوسرے شخص کی جانب برھتی۔ ہر ایک شخص سمیت ہمارے صحافتی پیشوا نے دل میں یہی ٹان لی تھی کہ ہنسی تو پنسی اور ہنستی تو وہ تھی ہی لیکن پھنسنے کی تصدیق کے چکر میں کبھی کویی شیدایی ھو کہ موقع محل میں بال اچال کر اپنے انباکس سے شعر سنا کر سمیش مارتا  تو کبھی کویی خود کو خواتین کے نفسیات کو سمجھنے والا ماہر گردانتا۔ میرے پاس تو سوایے میرے بے تکے اور بے سرے مزاج کے کچھ تھا ہی نہیں اور ایسے مسلح محفل میں مجھے اپنا آپ ویسے افغانستان جیسا نظر آیا۔ لیکن میرے پاس بھی کچھ ملا عمر  اور اسامہ بن لادن جیسے چونکا دینے والے چند ہی جملے تھے جو کہ میدان میں بروقت وار چکے تھے۔  اس محفل میں ایک شیشہ بدن، پھول کی پتی کی مانند نازک اور جیو جایئن کرنے کے بعد نزاکت کا ایئپل ٹاور کھڑا کیے ہویے کڑی سمیت تین کنوارے اور دو ازدواجی بندھن میں بندھے جسمیں ایک نیم   بزرگ  تھے جن کے مطابق ایسے دوشیزاوں کے ساتھ  تو جوانی دوبارہ انگڑایی لیتی ہے جبکہ دوسرے صاحب تو ہمارے باتوں سے قدرے چیں بجبیں ہوکے اپنی ان وانٹڈ خوشی کا اظھار کردیتے شامل تھے۔  محفل میں بیٹھا ایک نوجوان  تھا،جسکے دل میں عشق کا سمندر ٹھاٹھے مارتے ہویے محسوس ہورہا تھا، نجانے کونسے مس افریقہ کے  عشق کی بھیڑیاں پہنی ہویی تھی۔ ٹھنڈی ٹھنڈی آہیں بھرنے کے ساتھ ساتھ موصوف انکھ کے اندرونی ساخت کو بغیر بیرونی حرکت کے اندر ہی اندر گما کے محبوب کے متماثل الساقین مثلث جیسے نورانی چہرے کا دیدار کرتا۔
تاہم باتیں تو وہی چل رہی تھی کہ اختیارات میں بارک اوبامہ سے زیادہ باختیار اور مرضی میں پاک آرمی جیسے  خودمختاری کے مالک خواتین سے کیسے بندہ نو دو گیارہ ہو کہ اللہ کے عطا کردہ اس پرتعیش جیند و جان سے  مشرف بتفویض ہوا جاسکے۔ لیکن کیی جگہ تو زہن میں اقبال کا وہ شعر یاد اتا تھا جو انھوں نے عالم مدحوشی سے سرشار ھوکر فرمایا تھا جسکے الفاظ کچھ یوں ہیں کہ
وجود زن سے ہے تصویر کائنات میں رنگ
اسی کے دم سے ہے جھاں کا سوزو دروں
 لیکن تحریک عدم ازدواجیت نے اس شعر کا حلیہ بگاڑ کر کچھ یوں کردیا ہے کہ
 وجود زن سے ہیں تصویر اخبارات میں رنگ
اسی کے دم سے ہیں ہر گھر میں جنگ و جنوں
بس یہی پہ جناب محفل نیم بزرگ، شرمیلا فاروقی جیسی دوشیزہ، ازدواجیت کے متاثر اور متمنی سے میں نے اجازت لی اور پشار صدر کے بادشاہ ٹاور سے سیدھا یونیورسٹی ٹاون کے لیے چل نکلا۔ شاید ہی پھر کویی ایسی محفل نصیب ہو۔

خیبر سپر مارکیٹ یا صحافیوں کی ہیرہ منڈی

Heera Mandi mai Tawaif apny mamolat mai magan hai سلطنت خداد میں کئی جگہیں سماج میں وقوع پزیر مخصوص طبقات کی رہائش کی وجہ سے کافی مشہور ہیں جسمیں ڈیفنس کالونیاں، بحریہ ٹاوٗن ، جوڈیشل کالونی اور ہیرہ منڈی وغیرہ قابل زکر ہیں۔ پاکستان کی کیمیا گاہ خیبرپختونخوا میں بھی ایسے ہی کئی جگہیں پایی جاتی ہیں۔ یہاں بھی ڈیفنس کالونی کی طرح کئی جگہیں اشرف المخلوقات کے گروہ سے وابسطہ مختلف مکتبہء فکر کے پیشہ کے مناسبت سے امتیازی حیثیت کے حامل ہیں۔ کہاں پہ پوسٹ افیسر کالونی ہے تو کہاں پہ پی اے ایف کالونی۔ لیکن یہاں کی ایک مخصوص جگہ تخت لاھور کے ایک متبرک اور جزبات کے مارکیٹ کے مانند ہیرا منڈی سے مماثلت رکھتی ہے۔ جہاں صحافی حضرات گوشہ نشیں ہیں۔ قاریئن میں کئی اصحاب ادراک کو شائد میری یہ تشبیہہ ناگوار بھی گزرے اور گزرنی بھی چاہئے کیونکہ دنیا میں ایک یہی مخلوق ہی تو ہے جو سب کچھ کرتے ہویے بھی کسی احتساب کا سامنے نہیں کرتے۔ کاش میں ہیرا منڈی جا چکا ہوتا تو آج ان تشبیہات میں کم از کم متکلم خودکفیل ہوتا بحرکیف اپنے حلقہ احباب سے جتنا سنا ہے اسی کی بنیاد پر ہیرا منڈٰی اور یہاں کے صحافیوں کے مابین چند اشتراکی خصوصیات کی توضیح کرنے کی گستاخی کروں گا۔ ہمارے ہاں کئی ادارے ایسے ہیں جہاں ہمارے جیسے صحافیوں کو معاوضہ تو کیا داد بھی نہیں ملتی اور ایسا وہاں بھی نئی تقرری پانے والے تحائف کے ساتھ ہوتا ہے جسے ہم یہاں بآلفاظ دیگر انٹرن شپ اسی لئے پکارتے ہیں تاکہ ان سے ہماری مماثلت نہ پہچانی جائے۔ اور جہاں پہ ٹیرف یعنی معاوضہ طے ہے وہاں بھی سب ایک جیسے نہیں۔ اور ہمارے صحافت میں بھی ایسا ہی کویی رواج ہے کہ تین ہزار رواپے ماہوار سے لیکر لاکھوں ماہانہ کمانے والے ملیں گے اپکو۔ تو ایسے بھی لوگ ہیں جو روزانہ کا سو دو سو مزدوری لیتے ہیں اور یا پھر ایسے بھی ہیں جو روزانہ ہزاروں کی مد میں حساب کتاب چکتا کرتے ہیں۔ اور عین ایسا ہی کویی رواج تخت لاھور کی ہیرا منڈی میں بھی ہے۔
Bechara Young Journalist aisy hal mai kia likhy gaa
Bechara Young Journalist aisy hal mai kia likhy gaa
ایک فرق بھی یہاں اپکو واضح کرتا چلوں کہ جزبات کے اس لاہور والی مارکیٹ میں ریٹ اسکا زیادہ ہوتا ہے جو نیا برانڈ ہو لیکن وہ خاطر خواہ رقم پھر بھی اس بی بی کے متے نہیں لگتی بلکہ کسی پرانے گرو جی کے جیب سے ہو کہ جاتی جہاں وہ اپنا حصہ جو کہ ایک تہایی تک بھی ہوسکتا ہے، کاٹ کے باقی مشقت زدہ بی بی کے زمرے میں ڈال دیتے ہیں۔ لیکن یہاں صحافیوں کے بازار حسن میں یہ چیز شائد صنف نازک کی حد تک تو ٹھیک ہو لیکن جب بات کسی نئے فارغ التحصیل جوان کی آتی ہے تو اکثر و بیشتر جوانوں کو تین سے چار سال لگتے ہیں کسی ایسی تنخواہ پہ پہنچنے کے لئے جو ہمارے معاشرے میں تنخوا کہلانے کے لائق ہو۔ لیکن وہ لوگ ہم سے ایک بات میں اچھے اور بہتر ہیں اور وہ ہے دیانت داری اور اپنے دندے کے ساتھ خلوص اور وفاداری۔ لیکن ہمارے ہاں بھی تو سارے فرشتے ہیں نا،،، لیکن ایک ڈگری یافتہ نیم صحافی کی حیثیت میں اپنے اپ کو کبھی بھی ان فرشتوں میں شمار نہیں کرونگا۔ کیونکہ میں نے تو ابھی اس میدان میں قدم ہی رکھا ہے یہاں تو ایسے ایسے لوگ ہیں جن کے تجربے کا میں ہم عمر ہوں اور اصل میں وہی لوگ ہیں جو دس دس جگہ کام کرتے ہیں اور ہر پروجیکٹ اور ہر ادارے میں سرفہرست ہوتے ہیں۔ لیکن ان میں کئی نام ایسے بھی ہیں جن کی ضرورت بھی ہیں اور ان کا خلا ہماری ائندہ نسل سے اتنی جلدی پورا نہ ہوگا۔ لیکن کئی اصحاب تو ایسے ہیں جو اپنے تعلقات کو استعمال کرکے دو دو تین تین جگہ سے تنخواہ لیتے ہیں اور ہمارے جیسے کئی نوجوان بے روزگار دفتروں میں دکھے کھاتے ہیں۔ ہم صحافی لوگ ایک دوسرے کی بیخ کنی می کویی دقیقہ فرو گزاشت نہیں کرتے۔ جہاں بھی کویی ایسا موقع ہو جہاں دوسرے کو نیچ کرنا ممکن ہو تو ہم صاحبان ایسے موقع کو للچایے بغیر کہاں رہ سکتے ہیں۔ لیکن اس بارے تو ہمارے ہیرا منڈی کے انگڑایی لیتی ہویی ہل کٹ جوانیاں کافی منظم اور بااتفاق ہیں اور اپنے فن میں آنے والے لوگوں کی خاطر خواہ استقبال کو اپنا شیوہء روزگار سمجھتی ہیں۔ ہمارے ایڈیٹر کے پوسٹ کے مترادف وہاں کے گرو جی کافی لاڈ پیار سے لوک ڈانس اور گنگروو کی جھنکار میں ہاتھ سے پکڑ کر چلنا سکھاتے ہیں اور یہاں ایڈیٹر منہ پہ سٹوری پھینک کے اسمیں ترامیم تک گوارہ نہیں کرتے۔ وہ لوگ تو انسانیت کی خدمت میں کوشاں ہیں اور ہم جو خدمت کے ٹھیکیدار ہیں تباہی پہ طلعے ہویے ہیں۔ وہاں بھی جو سینئر بنتا ہے ہماری طرح ڈیسک پہ کام کرنے لگتا ہے لیکن زرا مارکیٹنگ پواینٹ اف ویو سے چست و چوبند ہوتے ہیں جبکہ یہاں سیدھی منہ بات ھی نہیں کرتے۔ وہاں بھی کئی ایک لوگ پولیس سے ملے ہوتے ہیں اور انجان شخص کے ساتھ پولیس والا کھیل کھیلتے ہیں اور بعد میں بندر بانٹھ کرلیتے ہیں جبکہ ہمارے ہاں تو میں نے ایک دوست کی کہانی سنی ہیں کہ ایک دوکاندار سے اف دی ریکارڈ ہوچھا کہ ملاوٹ کرتے ہو تو صاحب نے حامی بھر دی اور جناب کو بلیک میل کرکے کچھ رقم خود ہتھیا گیا لیکن رحمدلی کا یہ سلسلہ یہاں ختم نہیں ہوتا بلکہ آگے سے پولیس کو بھی مطلع کردیا جس سے ان کے وارے نیارے ہوگئے۔ یو تو ایک معمولی سا واقعہ ہے ۔ قارئیں اگر سوچے اور زرا محقق بن کے اپنے دایءں بایءں نظر دواڑایءں تو کئی چھرے بے نقاب ہونگے جو کہ صحافت کے نام پہ کالے دھبے ہیں۔ ہیرا منڈی جہاں جوانیوں کے سودے ہوتے ہیں، لوگ اپنی غموں کو کچھ دیر بھلانے کی خاطر آتے ہیں اور ہمارے ہاں صحافت میں بھی لوگ اپنے مسئلے مسائل حل کرنے کے لئے ہماری خدمات حاصل کرتے ہیں وہاں وہ لوگ بھی اسی غم کو بھلانے کے پیسے لیتے ہیں اور یہاں ہم بھی اسی غم کو کسی متعلقہ شخص کے کان تھک پہنچانے کے پیسے لیتے ہیں۔ اور اکثر و بیشتر تو اسی اواز کو دھبانے کے بھی پیسے ملتے ہیں۔ اور اصل مزہ تو اس روزگار کا ہے ہی یہی کہ اپ اواز کو اٹھاوگے تب بھی پیسے ملینگے اور اگر دھباوگے تو شائد اسکے دگنا مل جائیں۔ وہاں لوگو کی جزبات کی تسکین آوری ہوتی ہیں اور یہاں لوگ ٹیکرز اور بریکنگ نیوز میں جزبات سے کھیلتے ہیں۔ ہمارے جنرل سایئنس کے ریاضی دان استاد ہمیں میٹرک میں پہلی مرتبہ ریاضی پڑھاتے تھے جسمیں ہمیں صرف ایک ہی بات کی سمجھ آتی تھی کہ پس ثابت ہوا، لیکن میں نے تو موضوع اس تناظر میں چھیڑی تھی کہ صحافیوں کی بستی اور ہیرا منڈٰی کا عقلی تقابل کرسکوں لیکن یہاں تو شائد شکر کچھ زیادہ ہی ہوگیا ہے اور معاملہ ہیرا منڈٰی کی حق میں جا ٹہرا،،، وہ کہتے ہیں نہ کہ ایک خودکش نے شکایت بھیجی تھی کہ خود کش میکر صاحب بارود اتنا بھی زیادہ نہ ڈالو کہ ہم جنت پار چلے جایءں۔ مجھے یہ اندازہ نہیں کہ رد عمل کیا ہوگا لیکن ایک بات کا شدید احساس ہے کہ صحافیوں میں کوئی پناہ بھی نہیں دے گا اور اپنا فلیٹ تو ہے ہی نہیں ،،،، بحر کیف یہ کبھی مت بھولیں کہ لکھنے والہ خود بھی صحافی ہے لیکن جو حقیقت ہے وہ تو ہے۔۔۔۔ میرے لکھنے نہ لکھنے سے کیا ہوگا۔

تحریک انصاف پہ پختونخواہ کے د سل پاپڑ او یو لوڑ مناسب دہ

Image
پہ تیرو ٹاکنو کے د عام وگڑو نہ د ووٹ اخستو لپارہ لگ تر لگہ ٹولو کاندیدیتانو پہ خپلہ وینا کے د امریکایی بے پایلوتہ الوتکو پرضد عملیات پیل کولو وعدے پورتہ کڑے دی، او ھم د دغے ستونزے سرہ د پاکستان دننہ امن ھم بیل نہ دے۔ پہ دغہ سیاسی گوندونو کے پاکستان تحریک انصاف پر ٹولو لومڑے دے او پہ خیبرپختونخوا کے د نوی دولت واکدار ہم بلل کیگی۔ د دغہ سیاسی گوند مشر عمران خان د امریکایی بے پایلوتہ الوتکو بریدونو پرضد عملیات پیل کول پہ خپل منشور کے شامل کڑی دی۔ او ھم دا رقم ستر وزیر نوازشریف ھم چی د پاکستان مسلم لیگ نواز مشری ھم کوی پہ خپلو زیات ترہ وینا گانو کے ھم پہ سہ نہ سہ الفاظو کے د دغہ بریدونو غندنہ کڑے دہ او دا یے د پاکستان پہ خپلواکے پورے ٹوقے مسخرے گرزولے دی۔
سہ مودہ وڑاندے د امریکا صدر بارک اوباما لخوا پیل شوی وینا ترمخہ بہ امریکا د بے پایلوتہ الوتکو بریدونو پرضد قانون کے سخت والے راوستل شی او باید چی دا باوری شی پہ دغہ بریدونو کے سوک عام وگڑے لہ مینزہ لاڑ نشی۔ خو ددے سرہ سیلمہ اوباما دا ھم ویلی دی چہ دغہ بریدونہ د امریکا د حفاظت لپارہ پورتہ کڑے شوی گامونو برخہ دہ او دا قدم بہ تر نامعلوم وختہ پورے دوام لری چی پرے د پاکستان خارجہ دفتر لخوا د غمرازے یوہ وینا ھم جاری شوی دہ۔ خو ولے انکل سام پہ داسے وڑو وڑو غندنو غوگ نہ گروی۔ او غوگ بہ سنگہ اوگروی پہ تیر وختونو کے د پخوانی صدر پرویز مشرف لخوا ھغہ تہ دا اختیار ورکڑل شوے دے د پاکستان پہ پولے دننہ دے د ترھگرو پرضد کاروایی د امریکا ملاتڑ نہ سربیرہ ممکنہ نہ دہ۔ پخوانی پاکستان ارمی ستر جرنیل او دفاعی سیڑن پوہان دا دریز خپلوی چی د پاکستان ارمی پہ قباییلی سیمو کے ڈیرو زایونہ تہ د رسیدلو توان نہ لری چی پہ بدل کے یے پاکستان د ترھگرو پہ گوتہ خودونکے وژنہ پیل کولو لپارہ د امریکایی بے پایلوتہ الوتکو مرستہ ترلاسہ کڑے دہ او اوسنی دولتی چارواکی ددے ھیس کلہ جوگہ نہ دی چی د دغہ پیل شوی لاس لیک مخ نیوے دے اوکڑے شی ولے چی امریکا پہ نورو ڈیرو اڑخونو د پاکستان ملاتڑ کوی چی پکے د معاشی ٹینگخ دوامی کولو لپارہ کوٹلی گامونہ ھم شامل دی۔
پہ داسے وخت کے چی پاکستان تحریک انصاف پہ خیبر پختونخواہ اتحادی حکومت درلودی، د صوبے ھغہ وگڑی چی د نوی پاکستان پہ موخہ یے دغہ سیاسی گوند تہ پہ عامو ٹاکنو کے د کامیابئی لپارہ خپل ووٹ ورکڑے وو دغہ نوی پاکستان تہ اڑتیا لری او پہ دے طمعہ دی چی کلہ بہ د صوبے حکومت یو زانگڑے قدم پورتہ کوی کوم چہ بہ د پنجاب پرتلہ یو ناشنا او ستایونکے قدم وی خو ولے تراوسہ پورے د خیبر پختونواہ حکومت پہ دغہ ذانگڑے قدمونو کے د گاڈو پہ سفر کے مونز تہ اودریدل، د پیخور غٹ روغنتونو کے د سمدستی دارو درملو ویڑیا ویش، او پہ بجٹ کے د خواندگئی لپارہ د ڈیرو پیسو ورکولو نہ علاوہ لا داسے ہیس گام نہ دے پورتہ کڑے کوم چی د دغہ عام وگڑی لپارہ د اطمینان سبب اوگرزی۔
پہ عامو ٹاکنو ۳۱۰۲ کے د ترھگرو لخوا د نورو سیاسی گوندونو پرضد عملیات پیل کول او د تحریک انصاف خاموشہ پاتے کیدل تر ڈیر حدہ ددغہ سیاسی ڈلے د مشر عمران خان پہ طالبان خان مشہوریدو سبب اوگرزیدو ولے پہ دغہ وخت کے د تحریک انصاف موقف دا وو چی دوی د ٹاکنو پہ دے سور سیزن کے د ترھگرو سرہ د ہیس رقم غلیمئی پاللو جوگہ نہ دی ولے د ٹاکنو وروستو پہ صوبہ کے د حکومت مشر جمات دوہ وگڑی د ھغہ ترھگرو لخوا ووژل شول د چاسرہ چہ دے سیاسی ٹولنے تہ غلیمی پالل گران وو خو ولے اوس خو چی خدایے یے چاتہ پیخہ کڑی نو زان دے ورتہ میخہ کڑی ولے دے سیاسی گوند تہ پہ میخہ کیدو لہ پورہ وخت دے۔ د عامو ٹاکنو وروستو پہ خیبر پختونخوا کے دا قوی گمان کیدلو چی پہ صوبہ کے روانہ د بد امنئی لڑئی بہ تر ڈیر حدہ ختمہ شی خو ولے داسے سوچ د سیاسی سیڑن پوہانو تر سنگ کم عقلتوب گنڑل کیگی او چرتہ چی د ترھگرو لخوا نور سیاسی گوندونہ پہ گوتہ کڑے شوی وو ھلتہ نن د تحریک انصاف حکومت ہم دوہ وگڑی لہ مینزہ لاڑدی او پہ صوبہ کے یے د امن ٹینگخ ھم پہ وس کے نہ دے چی پہ ترس کے یے د عام وگڑو لیدلو شوو خوبونہ ریختیا کیدل قوی نہ خکاری۔
پہ تحریک انصاف د عام وگڑو اعتبار پہ یو سو وجو باندے وو چی پکے د موروثی سیاست مخ نیوے، عام وگڑو تہ د کور پہ درشل د انصاف شتون ممکن کول او د روان غلا غولتئی نہ ڈک نظام بدلون شامل وو۔ خو ولے تراوسہ پورے پہ خیبر پختونخواہ کے د منتخب شوو نمایئندگانو لخوا د موروثی سیاست ختمولو پر زایے خہ زیاتوالے پیل شوے دے او دا زیاتے پہ بلدیاتی ٹاکنو کے یو پہ دوہ د ودہ موندلو واضحہ گمان لری۔ سیاسی پوہان د خیبرپختونخواہ دولت تر اوسہ نابالغہ حکومت بلی ولے د تعلیم لپارہ د پنجاب پرتلہ دروند بجٹ ایخودل د دے دولت یو زانگڑے قدم دے۔ او پہ صوبہ کے د بجلئی کمی باندے قابو موندلو لپارہ د غور لاندے منصوبے ھم د ستایئنے وڑ دی۔ خو دا منصوبے پہ سنگہ او کلہ ریختیا کیگی او د دے دولت پہ خپلو مقصدونو کے پرمخیتاوے پیل کولو کے سومرہ صداقت دے دا د تحریک انصاف پہ مستقبل باندے یو سوالیہ نخہ دہ۔

سلاله او ملاله کے علاوه سب جائز هے

Image

سول کپڑوں میں ملبوس ایک حاضر سروس کپتان نے ریڈیو پروگرام کے بیچ میں سٹوڈیو کا دروازہ کھول کر اپنی تیزی اور زہانت کا مظاہرہ کیا اور پروگرام کے درمیان میں پوچھ گچ بھی کی جس سے اندازہ ہوتا تھا کہ پیمرا کے میڈیایی اخلاق کا ٹھیکہ تو جناب کے پاس ہے۔ جناب نے دھیمی آواز میں سٹوڈیو کے اندر کہا،کیا آپ آن ایئر ہیں، میں نے جواب میں سر ہلا کے حامی بھر دی۔ اور وہ سٹوڈیو سے اپنی ہٹلرانہ سٹایئل میں نکل گئے۔ صاحب اس خوشی سے پھولے نہ سمائے اور پروگرام کے بیچ میں ہی میرے پروڈیوسر کو میرے پیچھے اس پیغام کے ساتھ بھیج دیا کہ کیپٹن صاحب پروگرام کے بعد آپ سے ملاقات کے خواہشمند ہیں۔
اس نوزایئدہ کیریئر میں نے اپنے صحافتی پیشواووں سے ایک بات سیکھی تھی کہ جب وردی والی سرکار چاہے باوردی ہو یا بے وردی اپنے تیءں بلائے تب معاملہ کچھ ٹھیک نہیں ہوتا اور باقی پروگرام جو کہ ابھی تیس منٹ باقی تھا یہی غم کھاتا رہا کہ نہ جانے کس گلی میں زندگی کی شام Imageہوجائے۔ اور ایسی اضطراب کی صورت بھی کیوں نہ ہو جناب دو ٹکے کے اینکر نے بڑے بوٹ صاف کیے بغیر اپنے پروگرام میں ان کے گرو جی کی کلاس لی تھی۔ جس کا وہ ازحد برا مان گئے تھے مجھے تو ایسا لگ رہا تھا جیسے میں اس وقت مرزا قادیانی کی جگہ کھڑا تمام مذہبی جماعتوں کا ردعمل برداشت کررہا ہوں۔ میں نے کوئی نبوت کا دعوا نہٰیں کیا تھا اور نہ ہی ناموس رسالت کے کسی قانون کو چیلنج کیا تھا لیکن اس سے بڑھکر بھی کوئی قوت ہے جو سارے پاکستان کو سموئے ہوئے ہے اور تمام مکتبہء فکر کے لوگ اس کی قدرت اور کرشموں کی قائل ہے جناب اگر آپ کا دھیان اسوقت کسی روحانی چکر میں ہے تو براہ کرم میری نسبت آپ درست جگہ پہ نہٰیں بلکہ میں تو اپنے وطن کے جیالوں، سیاچن کے رکھوالوں اور سوات میں لوگوں کی عصمت کے محافظین کی بات کررہا ہوں۔ جناب نے بلا کر کہا کہ کس سے پوچھ کے آپ نے اپنے پروگرام میں یہ انٹرویو شامل کیا ہے اور جناب میرے بارے میں کچھ زیادہ ہی شکوک و شبھات کا اظہار کرنے لگے۔ وہ اپنے پروٹوکول اور میرے معافی مانگنے کے انتظار میں تھے لیکن میں نے کہہ دیا کہ جناب میرے پاس وقت اتنا نہیں اگر آپ نے مجھے کوئی تنبیہ دینی ہی ہے تو جلدی صادر فرما دیجئے۔ جس پر وہ مزید آگ بگولہ ہوگئے اور شام کو مجھے اپنے ریڈیو سے کال آیی کہ آپکے لئے مزید پروگرام نہیں ہے لحاظہ آپ پھر آنے کی زحمت مت کیجئے گا اور بات یہاں ختم نہیں ہوئی میرے بلکہ ساتھ میرے دوسرے ساتھی اینکر کو بھی نکال باہر کردیا گیا اور انصاف کی بات تو یہ ہے کہ میرے پسینے کی کمائی بھی مجھ سے ھذف کر دی گئی۔
یہ قریب ۲۱۰۲ کی اواخر کی بات ہے جن دنوں خاتون الہند،قوم کی چہیتی، سب کے دلوں کی آواز حضرت جناب ملالہ یوسفزئی رحمتہ اللہ علیہ پر طالبان کے حملے کا ڈھونگ رچا تھا۔ اور بدقسمتی سے میں ان دنوں میں سوات کے طالبان راڈیو کے ردعمل میں پاک فوج کے شعبہء تعلقات عامہ کی جانب سے کھولے گئے ایف ایم ۶۹ کا واحد اینکر تھا جو اس موضوع کا باریک بینی سے باخبر پاکستان پروگرام میں تجزیہ کرنے لگا اور تجزیہ بھی ایسا کہ اپنے معروف صحافی دوست کے یہ الفاظ بھی اس تجزیے میں شامل تھے کہ ملالہ کو سوات میں لڑکیوں کی تعلیم کے لئے اواز اجاگر کرنے کے سلسلے میں نشانہ نہیں بنایا گیا بلکہ اسکے پیچھے بی بی سی کے لئے گل مکئی نام سے لکھے جانے والی وہ ڈائری ہے جو کہ دنیا بھر میں پاکستانی طالبان کے تذلیل کا موجب بنی۔ اس پری ریکارڈڈ انٹرویو میں یہ بھی ایک سوال اٹھایا گیا تھا کہ کیا جنرل کیانی صرف ملالہ کے کیانی ہیں جو کہ فورن سے بھی پہلے ان کی عیادت کو پہنچے اور پلک جپکتے ہی محترمہ علاج کے لئے ہوایی ایمبولینس میں راولپنڈی سی ایم ایچ منتقل کردی گئی۔ تو کیا ایسے میں ان بچے بچیوں کا شکوہ بجا نہیں جو کہ لاپتہ افراد یا دہشتگردوں کے زمرے میں ڈرون حملوں کی نظر ہوتے ہیں۔ اسی موضوع پر پروگرام میں کافی سارا فیڈبیک بھی آیا اور ساتھ میں میری نوکری بھی گئی۔
لیکن ہم سوچ رہے تھے کہ جو باتٰیں ہم نے کی ہے وہ تو لوگوں کی دل کی آواز ہے پھر کیوں ہمارے ساتھ ایسا ہوا لیکن یہ بات تو ہمیں بعد میں سمجھ آیی کہ پاک فوج کے جوان نے ہلمٹ صرف اس لئے پہنی ہوتی ہے کہ اس کا سر بچا رہے ورنہ اس میں اندر سوچ بچار کے لئے کچھ ہوتا نہیں کیونکہ ان بچاروں کے فیصلے تو کہیں اور سے وحی کے زریعے وارد ہوتے ہیں۔
یہ تو اللہ بھلا کرے تحریک طالبان پاکستان کے جناب عدنان رشید کا کہ انھوں نے ملالہ کو خط لکھا جس میں وہی بات کہی گئی تھی کہ ’ملالہ تمھیں لڑکیوں کی تعلیم کے لئے اٹھائے گئے آواز کی پاداش میں نشانہ نہیں بنایا گیا بلکہ اصل موجب تو وہ بلاگ ہے جو آپ سوات آپریشن کے دوران ہمارے خلاف لکھا کرتی تھی‘
موصوف خط میں مزید یہ بھی فرماتے ہیں کہ یاد رکھو ملالہ تم اس لئے ملالہ ہو کہ تم پر طالبان نے حملہ کیا ہے اگر تم کہیں امریکی ڈرون طیارے کے حملے کا نشانہ بنتی تو شائد ہی تمھاری اتنی پزیرائی ہوتی بلکہ تمھاری خبر ہی کسے نشریاتی ادارے سے نشر ہی نہیں ہوتی کیونکہ وہ ڈرون تو ابامہ کی پالیسی کہ حصہ ہے اور وہ تو آپ کے آئڈئیل بھی ہیں۔
تو یہ تو وہی بات ہویی جو میں نے دو سال قبل اپنے پروگرام میں کہی تھی لیکن شائد میری عدنان رشید جتنی مصدقہ شخصیت نہیں تھی۔ خیر یہی نہیں مہران ایئر بیس کے مبئنہ ماسٹر مائینڈ نے اپنے دل کی بڑاس نکالنے کے لئے مزید لکھا ہے کہ ہم طالبان اگر چاہتے تو سوات میں ہزاروں لڑکیاں
سکول جاتی تھی انکو بھی نشانہ بناسکتے تھے لیکن انھوں نے تو بلاگ ہی نہیں لکھے۔ خط میں آگے یہ بھی لکھا تھا کہ ہم طالبان کسی
بھی سکول کے اڑانے کے زمہ دار نہیں کیونکہ آپکی پاک آرمی اور ایف سی اسے اپنی پناہ گاہوں اور کیمپوں کی جگہ استعمال میں لاتی ہیں جو کہ لازمن ہمارے کاروائی کا نشانہ بن جاتے ہیں۔
ہمارے ہاں کئی ادارے اپنے اداریاتی اختیارات کی حدود سے باہے گشت کر رہی ہیں اور کئی ادارے اپنے خول میں اسیے بند ہیں کہ اپنے حدود کے اندر بھی بے بس ہیں۔ اسکی زندہ مثال ہمارا سپریم کورٹ آف اکستان ہے جسکی سنتا ہر کوئی ہے لیکن مانتا کوئی نہیں۔ اسی طرح ابھی پچھلے دنوں میں ایک بین الاقوامی ویب نیوز پیپر کے لئے پاک افغان کراس بارڈر شیلنگ کے ایک ٹاسک پہ کام کر رہا تھا جس کے لئے میں نے فوج کے شعبہء تعلقات عامہ کے ایک میجر صاحب رابطہ کیا تو جناب نے یہ معزوری ظاہر کی کہ ان باتوں کا اختیار تو ہمارے بڑے ہدایت کار میجر جنرل عاصم سلیم باجوہ کے ساتھ ہے تو میں نے ان کے شان میں بھی عرض کیا کے عالم پناہ مجھے یہ ایک ٹاسک ملا ہے کہ پاک افغان بارڈر پر اب تک کتنے حملے ہوچکے ہیں اس میں کون کتنا ملوث ہے اور اس سے سویلین کو کتنا نقصان اٹھانا پڑا ہے تو آگے سے جواب ملا کہ جناب یہ تو دفتر خارجہ کا کام ہے اور آپ ان ہی سے رجوع کریں چنانچہ فتبال کے کیری کی طرح اپنے سوالوں کے جواب کی تاک میں دفترخارجہ سے بھی رابطہ کیا تو وہاں پر ایک ڈیپلومیٹک جواب کے ساتھ یہ ہدایت ملی کی اس مد میں مجھے فوج کے شعبہء تعلقات عامہ سے ہی بھتر رہنمائی مل سکتی ہے۔ تب جا کہ مجھے اپنے میتھس ٹیچر اعظم استاد جی کی بات سمجھ میں آئی کہ متماثل الاضلاع مثلث کے تینوں ضلعے برابر ہوتے ہیں جس سے باہر نکلنے کا کوئی چانس نہیں ہوتا۔
اور جب یہی گول مٹول جوابات میں اپنے ایڈیٹر صاحب کو ارسال کئے تو نتیجتن تین صفحے کی سٹوری میں میرے ملک کا موقف تین لائنز پر مبنی تھا۔ جبکہ سلالہ چیک پوسٹ پر جب حملہ کیا گیا تھا تو وہاں پر بھی ہمارے ملک کی آزاد اور خودمختار خارجہ پالیسی کا وضع قطع واضح کیا گیا تھا اور ایک ٹیلیفون پر ۶۲ جوانوں کی جانوں کا سودا ڈن ہوگیا۔
میرے بھائی اگر میرے وطن میں رہنا ہے تو میرے وطن کے اقدار اور اصولوں کو اپنانا ہوگا کیونکہ یہاں ملالہ اور سلالہ حملے کے علاوہ سب کچھ حلالہ ہے۔ اگر میری طرح پنگہ لو گے تو بنے بنائے چیک سے نوکری سمیت ہاتھ دھو بیٹھو گے۔
ایں جی۔۔۔۔ ہاں جی

قائد اعظم سوک دے

Image

زما د وڑوکوالی خبرہ دہ چی کلہ مہ پہ پرائمری کے سبق وے نو مختیار استاز جی زمونگ امتحان اخستو نو د یو ماشوم نہ یے پوختنہ اوکڑہ چی زمونگ د پیغمبر ﷺ سہ نوم دے، نو ماشوم ورتہ بغیر سہ د وقفے نہ جواب ورکڑو چی قائداعظم نو افسر حیران شو۔ خو ولے سہ یے اونہ وے او بیا یے ہم دغہ خبرہ وروستو د استازانو مینز کے کولہ او خندا یے ہم کولہ او پہ خپل تعلیمی نظام یے ا افسوس اظہار ہم کوو۔
پرون چہ کلہ سوارلسم اگست وو او ماتہ زما د ملگرو نہ د نوی پاکستان او قربانو او د مشرانو د تورے او باتورے پیغامونہ راتلل نو لگ یے پہ فکر کے واچولوم چی اخر دا سہ فلم شروع دے۔ مونگ خو بیخی ڑاندہ کبان یو۔ او دا لا سہ کوے چی تیرہ شپہ مے د پختونخوا پہ غیگہ پیخور کے د دے چوکرہ پارٹی دا بد حال اولیدو کوم چی یے پہ گاڈو او او موٹرسایئکلو باندے کوو نو دے قائد اعظم ماما تہ مے ڈیرہ غصہ رالہ چی تاسو تہ زمونگ دا قوم نہ وو معلوم چی مونگ دے پہ دے قھر اڑولو۔ او بیا پہ تیرہ تیرہ زمونگ دا پختانہ ورونڑہ توبہ توبہ۔ یو خوا چغے وھی وایی گرانی، غریبی او بد امنی دہ او بلخوا داسے د مستی Image
پہ بام سمسور پہ روڈونو زان خودنے کوی۔ نو دے قائد اعظم ماما نہ خو مے پہ دے کار دا زڑہ ڈیر بد شو۔ چی کاکا تہ خو لاڑے اخرے ورزے دے پہ یخ زیارت کے تیرے کڑے خو دا لانجہ دے زمونگ سر تہ پریخودہ۔ خو فکر کوم چی د پولے پورے پہ ہندوستان کے چی زمونگ نہ زیات مسلمانان دی نو ھغوی بہ ھم کیدے شی داسے پہ موٹرو او موٹر سایئکلو الا گولہ کوی، او باید چی د بنگلہ دیش مسلمانان چی ڈیرہ مودہ مونگ سرہ یوزایے وو، ھغوی بہ ھم پہ دا حال وی۔ خہ سم دم پہ ہند کے پہ قلار ناست وو، روغ رمٹ مسلمانان یے راواغستل او پہ مینز یے دوہ کڑل ہندوان خو ہم ھغہ ہندوان او ہم ہلتہ پاتے شول، خو دا گوتہ دے شین سترگی ماما ددے جناح کاکا سرہ پہ صلاح کڑے وہ۔ خو اسے یو خبرہ دہ، پہ یو پاکستان کے چی پکے شاوو خوا شل کروڑہ مسلمانان دی درے زایے روژہ او اختر کیگی نو چی کلہ یو ہندوستان وو نو چی دا اختر او روژے بہ سہ حال وو۔ خیر بیا رازو دے زمونگ قامی مشر جناح ماما نہ یو سو تپوسونہ کوو کہ چرتہ دا غصہ مے پہ دے یخہ شی۔
دا مشر چی محمد علی جناح یے نوم وو دے خو مونگ صرف دومرہ پیژنو چی د کراچی پہ یوہ تاجرہ کورنی کے د جناح پونجہ کرہ زیگیدلے وو۔ او وللہ کہ د مور نوم یے رازی مشر سڑے دے د مور نوم یے اخستل ہم خہ نہ دی اوس بہ د قوم پلاسٹکی ٹھیکداران راپسی مونگ بہ زایے تہ اورسی اوکنہ دا خو د جناح ماما پاکستان دے دلتہ خو عوام خلکو لہ سزا ورکوی او مقدمہ بیا وروستو چلی۔ خیر خو دے ماما د رتن جناح سرہ جوڑ وادہ ہم کڑے وو او سہ وخت کے د کانگرس ڈیر ایغ نیغ غڑے وو۔ خو چی ورتہ پتہ اولگیدہ چی دلتہ می سوک نہ اوری نو لکہ د نن وخت پی ٹی آیی (مسلم لیگ) تہ لاڑو او زان نہ یے التہ امیر مقام جوڑ کڑو۔ 
بیا پکے یو بل زوان ہم وو چا چی پاکستان پہ خوب کے لیدلے وو۔ مالہ خندا پہ دے پورے رازی چی نن سبا خو زمونگ پہ قوم کے پی ایچ ڈی سکالران بلکے پوسٹ ڈاک والہ پکے ہم شتہ نو دوی خو چرتہ ددے کشمیر یا افغانستان خوب اونہ لیدو ۔ اوس خو خلک خوبونو کے د خپل ژوند شہزادہ او لیلا وینی خو کیدے شی چی ھغہ وخت بہ دا رواج نہ وو نو۔ خو خیر ھغہ خو ڈیر خہ لیکوال ہم وو او پہ دے قوم بیدارولو یے زان لہ زارہ شنہ کڑے وو۔ خو د چا مشرانو نہ می ہم اوریدلی دی او سہ لگ ڈیر مہ د علامہ محمد اقبال پہ شاعرے کے ھم کتلی دی چی د ھغہ زیاتہ دلچسپی پہ ملت یعنی ٹول عالم اسلام کے وہ ھغی چرے ہم دا نہ غوختل چی مسلمان دے بیل بیل او د پولے پورے راپورے تقسیم شی د ھغہ خو د ٹول مسلمانان یو سلطنت کے یو کولو فلسفہ وہ خو دا راتہ اوس پتہ نیشتہ کہ بیا وروستو ورلہ چا چرتہ د یو وزارت لالچ ورکڑے وی او خپلے خبرے او فلسفے نہ یے ڈڈہ اختیار کڑے وی نو۔ زکہ چی زمونگ پاکستان کے خو د رشوت رواج ڈیر عام دے او دا سہ اوسنے رواج نہ دے بلکے دا یے زمونگ د وطن خٹہ کے اخکلے دے۔
خیر دے جناح ماما خو د مسلمانانو لپارہ د یو پاکستان جوڑولو کار پیل کڑو او داسے ورسرہ نور کسان ھم وو۔ ویل کیگی چی دا وخت داسے یو ٹولگے ھم وو چا چے دا غگ پورتہ کڑے وو چی جناح ماما او ددہ سرہ مرستیال ٹولگی تہ یے اوویئل چی دا مسلمانان مہ تقسیموے، او پہ دے یو ہندوستان کے مونگہ پہ امن کے اوسیدلے شو او دا خبرہ ٹھیک ھم وہ زکہ چی اوس کہ مونگہ بیل یو خو بیا ھم پہ قلار خو نہ یو کنہ، نو خہ نہ وہ چی یو زایے وے نو ڈیر سیزونو او معاملے بہ مو شریکے وے۔ او رختیا یو خبرہ بلہ رایادہ شوہ د پینزم جماعت پہ معاشرتی علوم کے یو سوال وو چی د مسلمانانو او ہندوانو پہ تھزیب کے سہ فرق دے نو مونگہ بہ تھزیب ڈیر لرے پریخودو او د مذھب فرق بہ مو بیانول شروع کڑل او دا زکہ چی مونگ تہ یے پہ ھغہ کتاب کے داسے لیکلی وو۔ چی مسلمانان د یو خدایے عبادے کوی او ھندوان د ڈیرو خدایانو عبادت کوی ھغوی غوا ڈیرہ مقدسہ گنڑی او مونگ یے حلالوو۔ دا داسے نورے خبرے ، خو کیدالے شی چی چا دا کتاب لیکلو ھغہ تہ بہ د مذھب او تھزیب دغہ فرق نہ وو معلوم او کہ پہ قصد یے داسے کڑی وی نو بیا خو زما پشان د ڈیرو تعلیمیافتو مجرم دے۔ 
زہ کلہ کلہ دہ خپل ملک تاریخ تہ پہ دے حیران شم چی د مشرانو او د پوہانو د خولے یو سہ اورم او پہ کتابونو کے بل سہ لولم اخر د چا نہ تپوس اوکڑم چی زما مشر زما قاید سوک دے او محمد علی جناح لہ د قائد اعظم خطاب گاندھی ولے ورکوو، پکار خو دا وہ چی دا ورلہ زمونگ د قام مشرانو ورکڑے وے، ولے د پاکستان د جوڑیدو پرمحال زما د پختون قام مشر خان عبدالغفار خان د کانگرس پہ ڈلہ صرف ددے وجے وو چی ھندوستان دے تقسیم نہ شی۔ او ولے دے یوازے نہ وو بلکے ڈیر علماء ھم دا دریز خپل کڑے وو۔ نو زہ علماء او باچہ خان سنگہ غلط ثابت کڑم او کہ نہ زہ د تحریک پاکستان ستر غڑی یادوم نو د ھغوی کومہ خبرہ اوستایئم۔
بیشکہ چی زمونگ محمد علی بہ ڈیر پوھہ لرلہ خو بلخوا باچہ خان او د ھند لوئے لوئے عالمان ولے د پاکستان د جوڑیدو پہ ترس وو۔ زہ خو تراوسہ پہ دو قومی نظریہ پوھہ نہ شوم چی دا چا مینز تہ راوڑے وہ۔ وایی چی محمد بن قاسم کلہ پہ سندھ برید اوکڑ نو بس دغہ وخت نہ دو قومی نظریہ پہ وجود کے راغلہ بل خوا وایی چی سرسید احمد خان ددے نظریے بانی دے۔ خو ددے نظریے مقصد خو د پاکستان جوڑیدل نہ بلکہ مسلمانان یو زانلہ قوم تسلیمول وو نو دا خو د ڈیر وخت نہ منلے شوے حقیقت وو چی مسلمانان او ھندوان دوانڑہ بیل بیل قومونہ دی۔ ولے زما د کورس پہ کتابونو کے انگریزی خو د یوے ژبے پہ توگہ خودل کیگی خو پختو او اردو کے ٹول اسلامیات خودل کیگی۔ مونگ تہ پہ کتابونو او میڈیا باندے ولے ہند د یو ازلی دشمن پہ توگہ خودل کیگی۔ولے دا سہ دوہ کسان خو نہ دی چی ہر وخت بہ جگڑے کوی دا خو دوہ ملکونہ دی دلتہ بین المللی قانون شتہ دلتہ د حدونو لپارہ معاھدے کیدلے شی او مونگ د یو قوم پہ ھیث د جگڑے نہ کولو یو لاس لیک ھم پیل کولے شی کومہ کے چی د دوانڑو ھیوادونو خیگڑہ دہ۔ خو دا بہ سوک او سنگہ کوی دا زما د سوچ نہ بالا تر خبرے دی۔
خو د پاکستان پہ جوڑیدو کے یو کار اوشو چی مونگ لہ یو زان لہ کیمیا گاہ ملاوو شوہ چی کلہ پکے مونگ ملا او کلہ جرنیل باندے تجربے کوو او کلہ نہ کلہ پکے د عوامو نمایئندگان ھم پہ چٹو کے واچوو۔ اکثر خلق دا وایی چی د نن پاکستان ھغہ پاکستان نہ دے کوم چی جناح جوڑ کڑے وو۔ نو جناح بابا کوم پاکستان جوڑ کڑے وو۔ ھغہ پہ لکونو خلق چی بے کورہ شوی وو ھغہ اوس ھم د ملک پہ بیلا بیلا سیمو کے بے کورہ دی۔ ھغہ د ملک د خزانے او پیسو مسلہ چی وہ نو ھغہ اوس ھم پہ اوچتہ پیمانہ دہ او د قام یو ماشوم د وڑومبے ساہ اخستو سرہ قرضدارے بلل کیگی۔ د اوبو مسلہ اوس ہم پہ ھغہ حال دہ او د وسلے او فوج مسلہ خو زمونگ د قوم ایمان جوڑ شوے دے چی د ٹولے قامی گٹے اتیا سلنہ پہ دے خرچ کوو۔ زما د سوالونو جوابونہ بہ د ڈیرو خلکو سرہ وی خو د ڈیرو وجوھاتو پہ وجہ بہ یے ماتہ نشی رارسولے زکہ چی

مونگ پختانہ بہ د اغیار نہ گیلہ سنگہ اوکڑو
پہ خپل وطن کے پہ نامہ د دھشت گرد یادیږو

کزن ريپ


په تيرو څو اونو کے په بين المللي ورځ پانړو کے پرله پسے د هند په اړه ګينګ ريپ او داسے د زنانو سره نور ظلم زياتي واقعے چاپ شوي دي او هم دا رقم ميډيايي څيړنکاران په دا پرله پسے کيدونکو واقعاتو کے د څه نه څه تړون په لټون کے بوخت دي۔ په دے اړه نوموړو ارګانونو او د لټون شرکتونو خپل راپورونه هم وړاندے کړي دي او نور ډير هم په دے موخه روان دي کيږي۔ خو ولے د زنانه سره زور زياتے د نړئ په هر ګوټ کے په څه نه څه شکل کښے شتون لري۔ که چرته زنانه ډيره بے وسه ده نو خپلے بے وسئ له يے د حيا او د دروند خوئي نوم ورکړے دے او دغه بے وسي يي د ميډيا لخوا د راپورونو وروستو د سختو نتيجو نه ډډه کولو په موخه پټه ساتلے ده۔
 د نړئ ډير هيوادونه د زنانو د حقونو ټهيکدران دي او ځان د ښځو د حقونو يواځيني هCousine rapeيوادونه بولي خو ولے په دغه هيوادونو کے هم يو شمير زنانه ډير د بے وسئ ژوند په تيرولو مجبوره دي۔ که چرته دوي دغه زنانو ته سکرټونه او مني جينز پشان لباسي آزادي وربخشلے ده نو بلخوا يے په خپله خوښه پرده کونکے زنانه نه د هغے پړونے او حجاب هم راخکلے دے۔ که يوه زنانه د خپل وجود نمائيش کوي خو دا خپل واکه زنانه ده او ددے ټول حقونه محفوظ دي خو بلخوا که چرے هم دغه زنانه خپل ښائيست او وجود د نامحرمو خلقو څخه پټول غواړي نو بيا دغي زنانه ته د خزو حقوق پوره په پوره نه دي حاصل۔ په هند کے خزو سره زياتے ولے کيږې دا خو يو اتفاق نه دے بلکے ددے پرشا به ډېرے وجے وي چي بائد د هند دولت يے مخنيوے اوکړي، خو دا هم يو حقيقت دے چي دا زياتے ځمونږ د پښتنو په چاپير چل کے هم شته خو دا د ميډيايي راپورونو هغه شان برخه نه ګرځي کوم رقم چي په هند کے رامخے ته کيږي۔
 نن سبا خو ګينګ ريپ ډير زيات شوے دے خو که تاسي پام لرنه اوکړئ نو ځمونږ په پښتنه سيمه کے د کزن ريپ يو شکل د ډير پخوا نه شته دے خو ولے دا تراوسه د يو عام تن په مشاهده کے نه ده راغلے۔ د پختنو زنانه عمومن د کوره بهر نه اوځي او نه يے سوشل ميډېا او داسے څه بل رقم د خبرتيا وسيلو ته لاس رسنه وي چي لکبله يے په شته ماحول کے د خپل سکون په لټون کے وي او د هغے شاه رخ خان يو عام تن هم کيدلے شي۔  چونکے د دے د حيا ډکو جونو سره بله څه خوښه نه وي نو ارو مرو به د ماما، کاکا يا ترور ځوئي سره د مينے تارونه انډول کوي۔ ځکه چي مينه خو د انساني ژوند بنياد دے او د دے مينے په شا د انسان ډير ضرورتونه هم تړلي دي چي د وينا ضرورت يے نشته ځکه چي هغه يو ښکاره حقيقت دے۔ پښتنه جينئ د دے ضرورت ترسره کولو لپاره هم د دغه رشتو مرسته اخلي۔
 او که يو طرف ته دا مينه بلل کيږي ځکه چي دا جونے دے ته خپله خوښه وائي ولے بلخوا دا ريپ هم بلل کيږې ځکه چي دا عمومن بغير رشتو نه سرته رسي او دا د دے جونے مجبوري ده چي خپل ضرورت لپاره په شته تنانو کښے يو تن خوښ کړي ولے چي نوره څه لاره نه وي۔ خو د فائدے خبره دا ده چي پختنو کے زيات تره د ترونو، ماما ګانو او تروريانو بچو سره رشتے کيږې۔ چي له وجے يے په رشتو کے مضبوطيا هم رازي خو د نوي دور د ډاکټري ريسرچ ترمخه په کزن ودونو کے وراثتي بيماريانے بيا راژوندئ کيږي۔ خو کيدلے شي ځما ډيرے خبرے بے بنياده هم اوګرځي ځکه چي زمونږ د چاپير چل هيت ډير توفير لري خو بيا هم ډيرے خبرے د يوبل سره تړون هم لري۔ که هرڅه اووايو خو دا خبره په ډانګ بيله ده چي د پختنو معاشره کے څه موده وړاندے ښځه ډيره آزاده او خپلواکه وه او هم دا وجه ده چي دا کور په ميرمن بلل کيږې۔

Friday, March 14, 2014

ڈیجیٹل قائد اعظم کے چودہ نکات



قائد محترم قائد مشرق جناب حضرت قائد اعظم نے اپنے دور میں چند تجاویز دی تھی جوکہ پاکستان بننے کا موجب بنی اور اب انہیں چودہ نکات کی جدید شکل درجہ زیل ہے۔

  • ا
       سندھ میں دو سیاسی جماعتوں اور چند قانون نافز کرنے والے اداروں کے علاوہ کسی بھی فرد یا ادارے کو یہ اختیار حاصل نہیں کہ وہ کراچی میں خوف و حراس پھیلانے کا ٹھیکہ لیلے تاوقتیکہ ادارہ ھازہ میں مندرجہ بالا صاحبان سے ففٹی ففٹی کا صلح کرلے یا ان کے بورڈ آف ڈایریکٹرز میں کسی کو سیل میں خرید لیں۔
  • ۲   
خیبر پختون خواہ کو سیاسی کیمیا گاہ سمجھا اور کہا جایے۔ جس میں پاکستان بھر کے سیاسی زہریلی گیسیں بار بار آزمائی جایئنگی۔ اس بارے اگر کسی مذہبی فرقے یا گروہ کو کوئی سازش سوجھی ہو تو ہوش کے ناخن لیکر آرام سے بیٹھے کیوں کہ امریکی انخلا کی صورت میں مولانا، مفتی ، سید اور قاضی حضرات کے لئے روسی دور سے بھی زیادہ پر تعیش اور پر ٓآسائیش اسامیوں کا منصوبہ تیار ہے ۔ ہاں البتہ ان جملہ اصحاب سے التماس ہے کہ اپنے بچوں کو لندن اور امریکی اداروں میں پڑھاکر اس سلسلے کو دوام بخش دیں۔ 
  • ۳
  خیبر پختونخواہ کی امن اور سالمیت کو تب تک ثانوی ترجیح نہیں دی جایئگی جب تک کے یہاں القائدہ ، ٹی ٹی پی ا ور جنداللہ جیسے ملٹی نیشنل کمپنیوں کے فرینچایئز پشاور صدر یا روسی دور کی طرح یونیورسٹی ٹاون میں کھل نہیں جاتے۔
  • ۴ 
۔ بلوچستان کو پاکستان سے علیحدہ کرکے ایران کو پچاس سال کے لیے لیز پر دینا چاہئے۔ اگرخاطر خواہ آفاقہ ہوا تو اس مدت کو دوگنا کرکے دونوں ملکوں کے درمیان تجارت کا دائرہ وسیع کردیا جائیگا۔ تاہم بلوچوں کو حق رائیے دیہی دینا اونٹ کو رکشے میں بیٹھانے کے مترادف ہے۔
  • ۵ 
۔ لاپتہ بلوچوں کو ماضی میں شہید ہویے مجاہدین کا صدقہ یا کفارہ سمجھ کر انہیں قومی سطح پر پس پشت ڈالنا چاہیے اور اگر کوئی پھر بھی اس باب کو پلٹے گا تو متلقہ سیکیورٹی اداروں سے این او سی لیکر لاپتہ افراد کے لیسٹ میں اضافہ کرسکتا ہے۔
  • ۶
 کشمیر پاکستان کا شہ رگ ہے اور پنجاب حکومت پاکستان کا، لھازہ خطے میں امن کے قیام کیلئے کشمیر کے مسئلے کا حل پاکستان کی مرضی کے مطابق کشمیریوں کے حق رائے دیہی کے خلاف حل ہونا چاہیے۔ ورنہ ایک دن آیگا جب وائٹ ہاوس والی دکان کے دروازے پہ لکھا ہوگا کہ کشمیر کی آزادی تک قرض بند ہے۔
  • ۷
  جڑواں شہروں سمیت شمالی علاقاجات میں فرقہ واریئت کے ہنر کو فروغ دینے کے لیے فاٹامیں ایک ٹیکنیکل انسٹیٹیوٹ کا قیام عمل میں لایا جائیگا جس کی ہر ایجنسی میں زیلی شاخیں ہونگی جہاں نیشنل اینٹیگریٹی، نیشنل اینٹرسٹ اور سٹریٹیجک انڈیپت کی ڈگریاں علما معافی چاہتا ہوں طلبا میں تقسیم کی جائینگی۔ ان طلبا سوری علما کو انٹرن شپ کے لئے اورکزئی، کرم اور دیگرایجنسیوں میں بھیجا جائیگا جہاں یہ عملی میدان میں اتر کر حالات کا مقابلہ اور سیاسی داو پیچ سیکھ سکینگے۔
  • ۸
سول میں تمغہ شجاعت، بسالت اور ہلال امتیاز سے آگے کوئی مائی کا لال طلب نہیں کریگا چاہے کتنا ہی بہادر اور نڈر کیوں نہ ہو نیز نشان حیدر جیسے اعزاز کے جملہ حقوق صرف بائی ڈیفالٹ شہید پیدا ہونے والے اعلا عسکری قیادت کے پاس محفوظ ہیں۔ لھازہ اعتزاز کے والدین کو یہ خواب کبھی نہیں دیکھنا چاہیے کیونکہ اس جیسے تو روزانہ دہشت گردوں کی فہرست میں شمار ہوکے گمنام فنا ہوجاتے ہیں۔
  • ۹
 قومی ترانے کو فارسی کی بجائے انگلش میں لکھنا اور پڑھنا چاہیے کیونکہ یہ پاکستان کی سفارتی اور سفارشی زبان ہے۔ جب کہ اعلا قیادت ہمیشہ باہر سے درآمد کرتے ہیں جنکے لئیے قومی ترانے کا آنا ضروری نہیں۔ 
  • ۱۰
 پاکستان میں تب تک تبدیلی ممکن نہیں جب تک (۱) پبلک ٹرانسپورٹ میں زرداری اور نوازشریف لیول کے پالیسیوں پر تنقید اور اپنے زمہ داریوں کی آگاہی بخوبی آنہیں جاتی ک(۲) جب تک لوگ مسجد میں جاکر چپل اپنے ساتھ اندر لیجاتے ہیں تاکہ کوئی چرانہ لیں (۳) اور جب تک عوامی کولر کے ساتھ پینے کا گلاس زنجیر سے بندھا ہوگا ۔ تب تک چھبیس خاندان پاکستانی عوام کا خون چوسنے میں مصروف ہونگے جب ڈیرھ ہوشیار عوام ان کے اس مقصد کے لیے نئے نئے محاذ کھولینگیں۔


  • ۱۱
 پولیس تھانہ عدالت اور دہشتگردوں کے دفاتر میں نہ صرف داڑھی بلکے وردی کا بھی فرق ہوگا جبکے ان کے علاقے اور حدود
کاروائی ایک بھی ہوسکتے ہیں۔ انکے متعلق اگر کوئی شکائیت ہو تو ملک کی اعلا عسکری قوت کو مطلع کرکے ان سے تو کیا حکومت وقت سے بھی چھٹکارہ پایا جاسکتا ہے۔
  • ۱۲ 
 اگر کوئی باہر کا بندہ رائمنڈ ڈیوس کی طرح بین الاقوامی بھادری دکھا کر ہمارے عسکری ادارے کے دو تین ملازمین کو موت کے گھاٹ اتار دے تو ایسے شخصیات کو بین الاقوامی اور امریکی قوانین کے تحت پورے پروٹوکول کے ساتھ ملک سے باہر جانے دیا جائیگا تاکہ ائندہ کے لئے سبق رہیں اور مستقبل میں کوئی بھی نیٹو سپلائی بند کرنے کا نہ سوچیں۔ تاہم ڈاکٹر شکیل
آفریدی جیسے مافوق الفطرت واقعات کی صورت میں فیصلہ بحق پولیٹیکل ایجنٹ محفوظ ہوگا ۔
  • ۱۳
 اور ہاں صحافیوں کے لئے خصوصی التماس ہے کہ جوحکومت او اس سے ملحقہ اداره جوکہے گا سچ کہے گا اور سچ کے سوا کچھ نہیں کہے گا۔ اگر انکے ارشادات سے روگردانی کروگے تو فرعون، ہارون اور نمرود کے موت مروگے۔ کیونکہ دنیا میں جب بھی کسی نے حق کا ساتھ نہیں دیا انکی اموات ہمیشہ عبرتناک ہی رہی ہیں۔
  • ۱۴
 اور آخری نقطہ کوئی بھی قائداعظم، علامہ اقبال اور ان جیسے قوم کے ہیروں کی شان میں گستاخی نہیں کرے گا کیونکہ وہ تو آسمان سے اترے تھے اور ان سے غلطی ہونا تو انسانی فطرت کے خلاف ہے۔ اسکے علاوہ جملہ بڑے تاریخی شخصیات کو کوئی فیس بک یا دیگر سماجی رابطوں کے ویب سائیٹ پر فرینڈ ریکوئیسٹ بھی نہیں بھیجے گا۔ 

Monday, March 10, 2014

خيال دے کلے دے

که هر څومره د هند پر ضد لوبيدو کښے پياوړي دي خو ولے رښتيا دا دي چي د پاکستان لوبغاړو د بنګله ديش په لوبغالئ کښے د هيواد بيرغ ځلولو په هسه کښے د ناوړے ناکامئ مخ اوليدو ۔ دا يواځے د يو لسو تنانو د کرکټ لوبه نه وه بلکے دا د هغه شاو خوا اتلس کروړه عام وګړو د جزباتو سره لوبے کول وو چا چے په څه نه څه شکل کښے دغه لوبه کتلو ته خپلے څوکئ او وظيفے پريخے وے۔  د پاکستان لخوا نوموړي بال وهونکي چي په تيرو څو لوبو کښے يے مخالفے ډلے ته په ميدان کښے د لوبيدو هنرونه په ګوته کلي وو،  تيره ورځ (هفتے په ورځ) د سري لنکا د ګولګوتي ويخته درلودونکي ليسيت ملينګا پرضد سل پاپړ او يو لوړ برابر شو چي په ترڅ کښے يے په لومړي اووه اورو کښۓ درے تنان د لوبغالئ څخه بهر شول۔ خو دا خو لوبه ده کله د داده وار او کله د ابئ وار خو ځمونږ په قسمت داسے ابئ رسيدلے ده چي که داده ډير هم زورور شي خو د ابئ نه وار نشي اخستلے۔ ماته خو د مصباح فواد او عمراکمل لوبه داسے ښکاره شوه چي لکه د پلار درے ضامن ډير نيک سيرته او نيک عمله يئ خو څلورم پرے آرجے رياض پشان واوړي او ټول محنت يے د شګو ډيرے شي۔ هم دا رقم ګل لالا او طلحا خانجي د سري لنکا د ګټے لپاره لګولے زور يو په دوه کو او بيا پروفيسوري پکښے يو کيچ هم له مينځه ورکلو چي له عمله يے ټولو کتونکو مخ ته بالټي واچول۔ که څه لګ ډيره هيله او آسره وه نو هغه هم راله حفيظ ختمه کلله۔ منم چي هغه به داسے نه کول غوښتل خو بيا هم اوشول۔ خو که مونږ د خپلو لوبغاړو سپکاوے شروع کلو نو دا به يوه بے فضوله خبره يئ ځکه چي په کوم رقم چي د سري لنکا لوبغاړو په ميدان کښے کتونکي ټينګ کلي وو نو هغه هم د ستائينے وړدي۔ چي دا ولے مونږ د هند او بنګله ديش پرضد دومره ننګيالي يو او د سري لنکا سره مخامخ کيدو باندے مو لينګي رپيږي، خو هغه د هجرے خبره چي مړه دا ميچ هم فيکس وو خيال دے کلے دے۔۔۔؟



Monday, March 3, 2014

آدھا تیتر آدھا بٹیر

زندگی میں تو ویریئس مواقع ایسے آتے ہیں این ویچ بندہ کافی ساری ہیپینیس اکٹھا کرلیتا ہے اور سم ٹایمز تو لایئف ہل لگتی ہے۔ کٹھن مراحل تو ایوری ون پہ گزرتی ہے اور ہر ایک کی سٹوری بھی دوسرے سے ڈیفیرنٹ ہے۔ می اپنے زندگی کے دیٹ مرحلے کو شیئر نہیں کرونگا اور نہ ہی آپکو اپنی کرنل شیر خان جیسی بریوری کے ٹیلز سناونگا۔ ٹو ڈے میں یورز کو ایک ایسی گرل کی سٹوری سناونگا جس نے اپنی ہول زندگی ایک پرسن کے انتظار میں گزار دی۔ شی تو ھز کی ایسی لور تھی کہ اسکا نام ہر وقت ون آر اینادر بہانے اسکے لینگوئج سے نکلتا تھا۔ شی اور ہی دونوں ایک ہی یونیورسٹی کے ڈیفیرنٹ ڈیپارٹمنٹ میں ریڈ کرتے تھے۔ شی صائیمہ کے نام سے نون تھی اور ہی اسد کے نام سے پیپل کے بیچ پہچانا جاتا تھا۔صایئمہ اور اسد کی میٹنگ پشاور یونیورسٹی کے کاپی شاپ مارکیٹ میں ہوئی۔ اور ملاقات بھی وٹ آ خوب ملاقات تھی کہ صایئمہ ٹوورڈز اپنے فرینڈز دیکھ رہی تھی، کہ فرنٹ سے اسد ایک ہاتھ میں جوس کا گلاس اور دوسرے ہینڈ میں موبایئل سے میسیج ٹایپ کررہا تھا، آگیا ۔۔۔کہ اچانک دونوں کا کولیجن ہوگیا اور دی ہول جوس اسد کے ہاتھ سے گرے ہویے موبائیل کے اوپر جا گرا ۔Adha tetar adha bater
اسد لوور مڈل کلاس سے بیلانگ کرتا تھا اور ڈیفیکلٹلی یونیورسٹی کے ایکسپنسز برداشت کر رہا تھا۔ صایئمہ کے پاس سوری کے علاوہ کوئی چارہ ناٹ تھا۔ لیکن سوری سے اسد کا وہ موبائیل تو واپس انے سے رہا جو اسکی منگیتر نے گھر میں کلاتس سیونگ کرتے کرتے پیسے اکٹھے کرنے بعد لیکر دیا تھا۔ اسد کے لیئے دیٹ ٹایئم موبائیل ب سے قیمتی اثاثہ تھا۔ اور فرینڈز کے صلاح اور کنسلٹنسی سے صائیمہ ھیڈ تو ٹھیک اسد کا موبائیل ۔ اور اسی بہانے دونوں کے بٹوین رابطے کے تمام سورسز کا ایکسچینج بھی ٹیک پلیس ہوا۔ اور ایک ہفتے کے بعد اسد کو ہز اون موبائیل اوسی حالت میں ملا۔ اور جو ہی اس نے موبائیل کیا موبایئل کے سکرین پہ صایئمہ کے نام ایک مسج ان پڑھ موجود تھا، اسد نے جو میسج ریڈ کیا تو وہ صایئمہ کی طرف سے معافی والا مسج تھا۔ اور معافی کے میسجز کا یہ تبادلہ رفتہ رفتہ انڈرسٹینڈنگ میں تبدیل ہوتا گیا۔
اسد چونکہ ایک رورل ایریا سے بیلانگ کرتا تھا اور بچپن ہی میں اسکی انگیجمنٹ ہوچکی تھی لیکن یہ ٹاک صایئمہ کے نالج میں نہیں تھی اور نہ ہی اسد صایئمہ کو یہ بات بتانا چاہتا تھا بیکاز اسد کے موسٹلی اخراجات اب صائیمہ کے پاکٹ منی میں سے پورے ہونے لگے تھے اور اسد کی تعلیمی اخراجات ایزیلی پورے ہونے لگے۔ اسد کے اپنے ڈیسٹینیشن تک پہنچنے کے لیے صایئمہ جیسی گرل فرینڈ کی ضرورت تھی جبکہ صایئمہ کو اپنے لایئف پارٹنر کے لیے جو سیلف میڈ بندہ چاہیے تھا وہ اسد کے شیپ میں اسکے سامنے تھا اور اسکے ساتھ فیچر میں ہونیوالے بندھن کے ڈریمز دیکھتی تھی۔ کرتے کرتے دونوں کے بیٹوین دو سال گزر گئے اور دونوں اپنے اپنے ڈیپارٹمنٹ سے ڈگری سیکور کرکے عملی زندگی میں داخل ہونے لگے تھے۔ دوسری جانب دونوں پیار کے راستے میں اتنا بڑھ چکے تھے کہ یوٹرن بہت پیچھے رہ چکا تھا۔ ناوو صایئمہ کافی سیرئیس ہوچکی تھی اور جاب سے پہلے اسد سے میرج کے بارے میں سوچ رہی تھی اور اپنے پیرنٹس کو راضی کرنے کے قریب تھی لیکن والدین کی شرط تھی کہ وہ لڑکے سے ملنے کے بعد ہی کوئی ڈیسیجن لینگے۔
ان دنوں میں اسد کو گاوں جانا پڑا۔ اس سے پہلے صایئمہ ایوری تنگ اسد کو بتا چکی تھی اور اسد کا ورجن تھا کہ وہ گاووں جا کے اپنے پیرنٹس سے بات کرکے شہر لایئگا اور صایئمہ کا رشتہ مانگنے ھر کے ہوم آئیگا۔ اسد ہیپی ہیپی گھر چلا گیا اور گھر جاکر نہ کوئی ایڈریس ویڈریس اور نہ کوئی کال فون وغیرہ ،،، صائیمہ کے کہنے کے مطابق ایوری پاسبل کوشش کی لیکن اب تک اسد کا کوئی رابطہ نہیں ہوا، ہاو ایور اسکے دوستوں کے مطابق جناب نے اپنے بچپن کی منگیتر سے شادی کی ہے اور لاف اینڈ ہیپی کی لایئف گزار رہا ہے۔ صائیمہ اب بھی اسد کے بے وفائی کے جواز سرچ کر رہی ہے۔ لیکن اس سٹوری کو صرف اسد ہی بیلنس کرسکتا ھے تا کہ اسکا ورجن کیا ہے۔ لیکن صائمہ کی ڈھلتی جوانی بھی جواب دینے لگی ہے اور ہر کی زندگی کا کوئی حاصل بھی نہیں ہے۔ صائمہ نجانے کتنے پیپلز کو فیس بک پر اپنی ہاف لو کی کہانی سناتی رہیگی اور پھر لائک می اسکے ساتھ ملتے ملتے ہر کا دکھ درد ریڈیوس کرنے کی ناکام کوشش کرتے رہینگے۔ کیا محبت ایسی ہوتی ہے اگر نہیں تو پھر کیسی ہوتی ہے۔۔۔؟