Like Us

There was an error in this gadget

Monday, June 10, 2013

فیرنی نما زرد خاتون، ایک انار سو بیمار


َ’وہ اپنے نزاکت کے نخرے اور لطافت کے کرشمے بکھیرتے ھویے نیم کنوارے انجمن میں یوں مخل ھویئں کہ جیسے دبے پاوں چمن میں بھار آیی ہو، لیکن محفل میں بیٹھے حضرات نے گنوارہ ھی نہ کیا کہ کویی فالصہ جیسا  وجود زن انکی محفل میں شامل ھوگیا ہے او وہ گنوارہ کیسے کرتے محفل میں تشریف رکھے ہویے ایک نیم بزرگ انسان جو اپنے زندگی کے اکثر و بیشتر لمحات رنگ رلیاں مناتے ھویے یادگار بنا چکے تھے  یھاں انتھایی متانت کے ساتھ اپنے تجربے کے ہم عمر نوجوانوں میں انسداد ازدواجیت کی تحریک کو متحرک کرنے کی ترویج میں ایسے مگن ھے کہ کسی کے دخول و خروج کا پتہ ھی نھیں چلتا۔ وہ بزرگ اپنے لاشعور جو کہ میرے اندازے کے مطابق ایک ھزار گیگا بایئٹ کے لگ بگ ھوگا سے موقع محل کے مناسبت سے ایک ایک منفرد واقعہ سناتے اور صحبت میں بیٹھے نوجوانوں کے حوصلے ازدواجیت کے ضد میں اور بھی بلند ھوتے، درحقیقت یہ صاحب بھادر اتنا سنجیدہ مزاق لے بیٹھے تھے کہ ھر نوجوان محفل میں نفسیاتی غیر حاضری کا شکار تھے اور ان کے ھاں میں ھاں ملاتے ھوئے میری طرح یہی سوچتے کہ میں نے تو جنم جنم ساتھ نبھانے کی قسمیں اٹھارکھی ھیں، بھلا میں کیسے اپنے آنے والے  درد سر سے چھٹکارا پاوں گا۔

 کیا یہ زنانہ زات اتنی بری ھے کہ اس کے ساتھ ایسا سلوک روا رکھا جایے۔ اور اگر یسا ہی ہے تو یہ سامنے بیٹھی زرد فیرنی کی طرح لشکارے مارتے ھویی جوانی کیوں اتنا ستاتی ھے۔  کیا یہ انڈے کے زردی کے مماثلت والے لباس میں ملبوس نینوں کو شٹر ڈاون ہڑتال کے دروازوں کی طرح نیچھے کیے ھویے مستی میں سست روی کے قایئل دوشیزہ بھی اسی گروہ کا حصہ ھے جسکے برخلاف ھم سب زبانی اور فکری طور پر برسر پیکار ہیں۔

کافی گفت و شنید کے بعد وہ کوہ کاف کی پری جیسی نازک خاتون نما دوشیزہ بھی سمجھ گئیں کہ اسکے آجو باجو انھی کے زات برخلاف باتیں اور آنے والے وقت کی منصوبہ بندی ہورھی ھے۔ تاہم موصوفہ کے  سید قایم علی شاہ کے سر جیسے صاف وشفاف ایڑھی کے درد نے حاضرین محفل کی توجہ ایسی بٹوری جیسے کویی ناچاہتے ہویے بھی ڈیپارٹمنٹ میں نو وارد ہونی والی خاتون کی رہنمایی کے لیے لپکتے ہیں‘

یہ کسی سنیمایی سین کی منظر کشی نہی اور نہ ہی کسی سجی محفل کی روداد ھے، اگر ھے تو فقط ایک حادثاتی ملاقات کے چند ناگزیر لمحات ہے جس نے بے چینی اور عدم اطمینان کی ابر آلود فضا کو میرے خیالات کے تھانے میں سفارشات کے فون کر کر کے مجھے وقایع نگاری پر مجبور کیا۔ بریالی صمدی کے ویسٹ کوٹ کے بٹن جیسے بڑی بڑی گول انکھیں جو کہ ایک ھی محفل میں کیی محازوں سے نبردآزما تھیں، کبھی جھکتی تو کبھی سرویلنس کیمرے کی طرح محفل میں پایے جانیوالے اشرف المخلوقات کے بہکتے ہویے چھرے پر لمحہ بھر کے لیے رکتی اور اپنی خارجہ پالیسی کا تعین کرنے بعد دوسرے شخص کی جانب برھتی۔ ہر ایک شخص سمیت ہمارے صحافتی پیشوا نے دل میں یہی ٹان لی تھی کہ ہنسی تو پنسی اور ہنستی تو وہ تھی ہی لیکن پھنسنے کی تصدیق کے چکر میں کبھی کویی شیدایی ھو کہ موقع محل میں بال اچال کر اپنے انباکس سے شعر سنا کر سمیش مارتا  تو کبھی کویی خود کو خواتین کے نفسیات کو سمجھنے والا ماہر گردانتا۔ میرے پاس تو سوایے میرے بے تکے اور بے سرے مزاج کے کچھ تھا ہی نہیں اور ایسے مسلح محفل میں مجھے اپنا آپ ویسے افغانستان جیسا نظر آیا۔ لیکن میرے پاس بھی کچھ ملا عمر  اور اسامہ بن لادن جیسے چونکا دینے والے چند ہی جملے تھے جو کہ میدان میں بروقت وار چکے تھے۔  اس محفل میں ایک شیشہ بدن، پھول کی پتی کی مانند نازک اور جیو جایئن کرنے کے بعد نزاکت کا ایئپل ٹاور کھڑا کیے ہویے کڑی سمیت تین کنوارے اور دو ازدواجی بندھن میں بندھے جسمیں ایک نیم   بزرگ  تھے جن کے مطابق ایسے دوشیزاوں کے ساتھ  تو جوانی دوبارہ انگڑایی لیتی ہے جبکہ دوسرے صاحب تو ہمارے باتوں سے قدرے چیں بجبیں ہوکے اپنی ان وانٹڈ خوشی کا اظھار کردیتے شامل تھے۔  محفل میں بیٹھا ایک نوجوان  تھا،جسکے دل میں عشق کا سمندر ٹھاٹھے مارتے ہویے محسوس ہورہا تھا، نجانے کونسے مس افریقہ کے  عشق کی بھیڑیاں پہنی ہویی تھی۔ ٹھنڈی ٹھنڈی آہیں بھرنے کے ساتھ ساتھ موصوف انکھ کے اندرونی ساخت کو بغیر بیرونی حرکت کے اندر ہی اندر گما کے محبوب کے متماثل الساقین مثلث جیسے نورانی چہرے کا دیدار کرتا۔

تاہم باتیں تو وہی چل رہی تھی کہ اختیارات میں بارک اوبامہ سے زیادہ باختیار اور مرضی میں پاک آرمی جیسے  خودمختاری کے مالک خواتین سے کیسے بندہ نو دو گیارہ ہو کہ اللہ کے عطا کردہ اس پرتعیش جیند و جان سے  مشرف بتفویض ہوا جاسکے۔ لیکن کیی جگہ تو زہن میں اقبال کا وہ شعر یاد اتا تھا جو انھوں نے عالم مدحوشی سے سرشار ھوکر فرمایا تھا جسکے الفاظ کچھ یوں ہیں کہ
وجود زن سے ہے تصویر کائنات میں رنگ
اسی کے دم سے ہے جھاں کا سوزو دروں
 لیکن تحریک عدم ازدواجیت نے اس شعر کا حلیہ بگاڑ کر کچھ یوں کردیا ہے کہ
 وجود زن سے ہیں تصویر اخبارات میں رنگ
اسی کے دم سے ہیں ہر گھر میں جنگ و جنوں
بس یہی پہ جناب محفل نیم بزرگ، شرمیلا فاروقی جیسی دوشیزہ، ازدواجیت کے متاثر اور متمنی سے میں نے اجازت لی اور پشار صدر کے بادشاہ ٹاور سے سیدھا یونیورسٹی ٹاون کے لیے چل نکلا۔ شاید ہی پھر کویی ایسی محفل نصیب ہو۔

Thursday, May 30, 2013



Categorizing sex with a common perspective

We often enjoy sounds like ohhh aaahhh come on do it do it, get set, keep moving on,  and these sounds are good enough with a video showing a practical exercise of sex and that videos can be found in most of laptops and mobiles as hidden files. We exercise sex up to our level best, we favour it and the major part of Pashtun society that is 90 percent are addicted to sex, and this is not only because of the carnivorous food but also because of some taboos that led the society very much congested. In my opinion most of our ideas and creativity is blocked because we always think of sex which means a mental satisfaction and after getting it one can direct through an innovation easily. Sex is one of the basic need of human being then why are not only denying it but discouraging the ideas which can address this issue. But I am wondering here that individually we are always in search of sex but we deny this truth publicly.
How do we get our sex education, how do we come to know that it’s our puberty age and now we have got some physical and mental changes and how it can be exercised in a positive direction so that to avoid complications. We don’t get this education from our teacher neither from our madrassa teacher nor from our parents but we get it from a person who in response sexually exploit

us. If a person get a right education in the wrong way so how he can make a good use of it. There is no rocket science in the issue, just think of it that if we suppose to make it a part of syllabus then to how many problems we can get rid of. In our society where the social system is so congested that one cannot go for its choice in the sex, but will go for the existing and available sources, that may be cousins, neighbours or masturbation. The female in our society is facing sexual harassment from her cousins firstly and then she can find someone else to make level her satisfaction need. The ban on open sex idea has left our society so dirty and involuntary in the sex that by knowing some stories you will hate this social system. There are sexual relations in our society which consider to be the most dangerous form of a social system but these stories are hidden, and exist also.
Many people are so creative that they have commercialized it in the form of Heera Mandi, call girl or we often call it taxi girl as well. This is called commercial sex, which means to use the sex for a business purpose. And this aspect of the sex remains a good industry in the west named as porn industry. But there are people who are volunteer in this cause. And this is we can termed as volunteer sex. We can categorise the gays most often called themselves as Shauqeen (Fond of It) or the females are also part of it, but the major part of this category is girl/boy friendship. In this relation the friends offer sex voluntarily without any cost.  In the cities one can find some call girls or other places where he or she can met his or counterpart but in far-flung areas where the female movement is restricted then most of the people are adopting homosexuality. In this process it always happen that the person who quenched peoples thirst are very much less and the list of thirsty people is far high, so this person is always remains a bone of contention amongst these sexually hypered people. This service man is termed as Koni, but this is not as much commercial as the city’s gays are. He is mostly rely on barter system, supposed you will offer him some shopping or something need of him, and he will offer you his services somewhere in the fields or indoor.
There is big community attached to another category which is very much creative but not in positive direction. This category names as self-help category, which means to satisfy himself by his own means i.e masturbation. While the females are mostly rely on rubbing which is almost same like playing with guitar. If we accept the sex as basic need and come up with its education in our course books so we can tackle down all these negative perceptions. What will be the outcome that we can get a creative and prosperous generation out of this raw material. Our generation would be sexually matured and saturated and they will never think of it exhaustively. They will get sleep in the long days of June and july and they will understand the use, terms and conditions of sex.