Like Us

There was an error in this gadget

Thursday, April 10, 2014

قائد اعظم سوک دے

Image

زما د وڑوکوالی خبرہ دہ چی کلہ مہ پہ پرائمری کے سبق وے نو مختیار استاز جی زمونگ امتحان اخستو نو د یو ماشوم نہ یے پوختنہ اوکڑہ چی زمونگ د پیغمبر ﷺ سہ نوم دے، نو ماشوم ورتہ بغیر سہ د وقفے نہ جواب ورکڑو چی قائداعظم نو افسر حیران شو۔ خو ولے سہ یے اونہ وے او بیا یے ہم دغہ خبرہ وروستو د استازانو مینز کے کولہ او خندا یے ہم کولہ او پہ خپل تعلیمی نظام یے ا افسوس اظہار ہم کوو۔
پرون چہ کلہ سوارلسم اگست وو او ماتہ زما د ملگرو نہ د نوی پاکستان او قربانو او د مشرانو د تورے او باتورے پیغامونہ راتلل نو لگ یے پہ فکر کے واچولوم چی اخر دا سہ فلم شروع دے۔ مونگ خو بیخی ڑاندہ کبان یو۔ او دا لا سہ کوے چی تیرہ شپہ مے د پختونخوا پہ غیگہ پیخور کے د دے چوکرہ پارٹی دا بد حال اولیدو کوم چی یے پہ گاڈو او او موٹرسایئکلو باندے کوو نو دے قائد اعظم ماما تہ مے ڈیرہ غصہ رالہ چی تاسو تہ زمونگ دا قوم نہ وو معلوم چی مونگ دے پہ دے قھر اڑولو۔ او بیا پہ تیرہ تیرہ زمونگ دا پختانہ ورونڑہ توبہ توبہ۔ یو خوا چغے وھی وایی گرانی، غریبی او بد امنی دہ او بلخوا داسے د مستی Image
پہ بام سمسور پہ روڈونو زان خودنے کوی۔ نو دے قائد اعظم ماما نہ خو مے پہ دے کار دا زڑہ ڈیر بد شو۔ چی کاکا تہ خو لاڑے اخرے ورزے دے پہ یخ زیارت کے تیرے کڑے خو دا لانجہ دے زمونگ سر تہ پریخودہ۔ خو فکر کوم چی د پولے پورے پہ ہندوستان کے چی زمونگ نہ زیات مسلمانان دی نو ھغوی بہ ھم کیدے شی داسے پہ موٹرو او موٹر سایئکلو الا گولہ کوی، او باید چی د بنگلہ دیش مسلمانان چی ڈیرہ مودہ مونگ سرہ یوزایے وو، ھغوی بہ ھم پہ دا حال وی۔ خہ سم دم پہ ہند کے پہ قلار ناست وو، روغ رمٹ مسلمانان یے راواغستل او پہ مینز یے دوہ کڑل ہندوان خو ہم ھغہ ہندوان او ہم ہلتہ پاتے شول، خو دا گوتہ دے شین سترگی ماما ددے جناح کاکا سرہ پہ صلاح کڑے وہ۔ خو اسے یو خبرہ دہ، پہ یو پاکستان کے چی پکے شاوو خوا شل کروڑہ مسلمانان دی درے زایے روژہ او اختر کیگی نو چی کلہ یو ہندوستان وو نو چی دا اختر او روژے بہ سہ حال وو۔ خیر بیا رازو دے زمونگ قامی مشر جناح ماما نہ یو سو تپوسونہ کوو کہ چرتہ دا غصہ مے پہ دے یخہ شی۔
دا مشر چی محمد علی جناح یے نوم وو دے خو مونگ صرف دومرہ پیژنو چی د کراچی پہ یوہ تاجرہ کورنی کے د جناح پونجہ کرہ زیگیدلے وو۔ او وللہ کہ د مور نوم یے رازی مشر سڑے دے د مور نوم یے اخستل ہم خہ نہ دی اوس بہ د قوم پلاسٹکی ٹھیکداران راپسی مونگ بہ زایے تہ اورسی اوکنہ دا خو د جناح ماما پاکستان دے دلتہ خو عوام خلکو لہ سزا ورکوی او مقدمہ بیا وروستو چلی۔ خیر خو دے ماما د رتن جناح سرہ جوڑ وادہ ہم کڑے وو او سہ وخت کے د کانگرس ڈیر ایغ نیغ غڑے وو۔ خو چی ورتہ پتہ اولگیدہ چی دلتہ می سوک نہ اوری نو لکہ د نن وخت پی ٹی آیی (مسلم لیگ) تہ لاڑو او زان نہ یے التہ امیر مقام جوڑ کڑو۔ 
بیا پکے یو بل زوان ہم وو چا چی پاکستان پہ خوب کے لیدلے وو۔ مالہ خندا پہ دے پورے رازی چی نن سبا خو زمونگ پہ قوم کے پی ایچ ڈی سکالران بلکے پوسٹ ڈاک والہ پکے ہم شتہ نو دوی خو چرتہ ددے کشمیر یا افغانستان خوب اونہ لیدو ۔ اوس خو خلک خوبونو کے د خپل ژوند شہزادہ او لیلا وینی خو کیدے شی چی ھغہ وخت بہ دا رواج نہ وو نو۔ خو خیر ھغہ خو ڈیر خہ لیکوال ہم وو او پہ دے قوم بیدارولو یے زان لہ زارہ شنہ کڑے وو۔ خو د چا مشرانو نہ می ہم اوریدلی دی او سہ لگ ڈیر مہ د علامہ محمد اقبال پہ شاعرے کے ھم کتلی دی چی د ھغہ زیاتہ دلچسپی پہ ملت یعنی ٹول عالم اسلام کے وہ ھغی چرے ہم دا نہ غوختل چی مسلمان دے بیل بیل او د پولے پورے راپورے تقسیم شی د ھغہ خو د ٹول مسلمانان یو سلطنت کے یو کولو فلسفہ وہ خو دا راتہ اوس پتہ نیشتہ کہ بیا وروستو ورلہ چا چرتہ د یو وزارت لالچ ورکڑے وی او خپلے خبرے او فلسفے نہ یے ڈڈہ اختیار کڑے وی نو۔ زکہ چی زمونگ پاکستان کے خو د رشوت رواج ڈیر عام دے او دا سہ اوسنے رواج نہ دے بلکے دا یے زمونگ د وطن خٹہ کے اخکلے دے۔
خیر دے جناح ماما خو د مسلمانانو لپارہ د یو پاکستان جوڑولو کار پیل کڑو او داسے ورسرہ نور کسان ھم وو۔ ویل کیگی چی دا وخت داسے یو ٹولگے ھم وو چا چے دا غگ پورتہ کڑے وو چی جناح ماما او ددہ سرہ مرستیال ٹولگی تہ یے اوویئل چی دا مسلمانان مہ تقسیموے، او پہ دے یو ہندوستان کے مونگہ پہ امن کے اوسیدلے شو او دا خبرہ ٹھیک ھم وہ زکہ چی اوس کہ مونگہ بیل یو خو بیا ھم پہ قلار خو نہ یو کنہ، نو خہ نہ وہ چی یو زایے وے نو ڈیر سیزونو او معاملے بہ مو شریکے وے۔ او رختیا یو خبرہ بلہ رایادہ شوہ د پینزم جماعت پہ معاشرتی علوم کے یو سوال وو چی د مسلمانانو او ہندوانو پہ تھزیب کے سہ فرق دے نو مونگہ بہ تھزیب ڈیر لرے پریخودو او د مذھب فرق بہ مو بیانول شروع کڑل او دا زکہ چی مونگ تہ یے پہ ھغہ کتاب کے داسے لیکلی وو۔ چی مسلمانان د یو خدایے عبادے کوی او ھندوان د ڈیرو خدایانو عبادت کوی ھغوی غوا ڈیرہ مقدسہ گنڑی او مونگ یے حلالوو۔ دا داسے نورے خبرے ، خو کیدالے شی چی چا دا کتاب لیکلو ھغہ تہ بہ د مذھب او تھزیب دغہ فرق نہ وو معلوم او کہ پہ قصد یے داسے کڑی وی نو بیا خو زما پشان د ڈیرو تعلیمیافتو مجرم دے۔ 
زہ کلہ کلہ دہ خپل ملک تاریخ تہ پہ دے حیران شم چی د مشرانو او د پوہانو د خولے یو سہ اورم او پہ کتابونو کے بل سہ لولم اخر د چا نہ تپوس اوکڑم چی زما مشر زما قاید سوک دے او محمد علی جناح لہ د قائد اعظم خطاب گاندھی ولے ورکوو، پکار خو دا وہ چی دا ورلہ زمونگ د قام مشرانو ورکڑے وے، ولے د پاکستان د جوڑیدو پرمحال زما د پختون قام مشر خان عبدالغفار خان د کانگرس پہ ڈلہ صرف ددے وجے وو چی ھندوستان دے تقسیم نہ شی۔ او ولے دے یوازے نہ وو بلکے ڈیر علماء ھم دا دریز خپل کڑے وو۔ نو زہ علماء او باچہ خان سنگہ غلط ثابت کڑم او کہ نہ زہ د تحریک پاکستان ستر غڑی یادوم نو د ھغوی کومہ خبرہ اوستایئم۔
بیشکہ چی زمونگ محمد علی بہ ڈیر پوھہ لرلہ خو بلخوا باچہ خان او د ھند لوئے لوئے عالمان ولے د پاکستان د جوڑیدو پہ ترس وو۔ زہ خو تراوسہ پہ دو قومی نظریہ پوھہ نہ شوم چی دا چا مینز تہ راوڑے وہ۔ وایی چی محمد بن قاسم کلہ پہ سندھ برید اوکڑ نو بس دغہ وخت نہ دو قومی نظریہ پہ وجود کے راغلہ بل خوا وایی چی سرسید احمد خان ددے نظریے بانی دے۔ خو ددے نظریے مقصد خو د پاکستان جوڑیدل نہ بلکہ مسلمانان یو زانلہ قوم تسلیمول وو نو دا خو د ڈیر وخت نہ منلے شوے حقیقت وو چی مسلمانان او ھندوان دوانڑہ بیل بیل قومونہ دی۔ ولے زما د کورس پہ کتابونو کے انگریزی خو د یوے ژبے پہ توگہ خودل کیگی خو پختو او اردو کے ٹول اسلامیات خودل کیگی۔ مونگ تہ پہ کتابونو او میڈیا باندے ولے ہند د یو ازلی دشمن پہ توگہ خودل کیگی۔ولے دا سہ دوہ کسان خو نہ دی چی ہر وخت بہ جگڑے کوی دا خو دوہ ملکونہ دی دلتہ بین المللی قانون شتہ دلتہ د حدونو لپارہ معاھدے کیدلے شی او مونگ د یو قوم پہ ھیث د جگڑے نہ کولو یو لاس لیک ھم پیل کولے شی کومہ کے چی د دوانڑو ھیوادونو خیگڑہ دہ۔ خو دا بہ سوک او سنگہ کوی دا زما د سوچ نہ بالا تر خبرے دی۔
خو د پاکستان پہ جوڑیدو کے یو کار اوشو چی مونگ لہ یو زان لہ کیمیا گاہ ملاوو شوہ چی کلہ پکے مونگ ملا او کلہ جرنیل باندے تجربے کوو او کلہ نہ کلہ پکے د عوامو نمایئندگان ھم پہ چٹو کے واچوو۔ اکثر خلق دا وایی چی د نن پاکستان ھغہ پاکستان نہ دے کوم چی جناح جوڑ کڑے وو۔ نو جناح بابا کوم پاکستان جوڑ کڑے وو۔ ھغہ پہ لکونو خلق چی بے کورہ شوی وو ھغہ اوس ھم د ملک پہ بیلا بیلا سیمو کے بے کورہ دی۔ ھغہ د ملک د خزانے او پیسو مسلہ چی وہ نو ھغہ اوس ھم پہ اوچتہ پیمانہ دہ او د قام یو ماشوم د وڑومبے ساہ اخستو سرہ قرضدارے بلل کیگی۔ د اوبو مسلہ اوس ہم پہ ھغہ حال دہ او د وسلے او فوج مسلہ خو زمونگ د قوم ایمان جوڑ شوے دے چی د ٹولے قامی گٹے اتیا سلنہ پہ دے خرچ کوو۔ زما د سوالونو جوابونہ بہ د ڈیرو خلکو سرہ وی خو د ڈیرو وجوھاتو پہ وجہ بہ یے ماتہ نشی رارسولے زکہ چی

مونگ پختانہ بہ د اغیار نہ گیلہ سنگہ اوکڑو
پہ خپل وطن کے پہ نامہ د دھشت گرد یادیږو

Reactions:

0 comments:

Post a Comment